33.1 C
Delhi
جولائی 24, 2024
Samaj News

نفرت انگیز تقاریر پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوسکتا:سپریم کورٹ

نئی دہلی، سماج نیوز: سپریم کورٹ نے پیر کو کہا کہ نفرت انگیز تقریر پر اتفاق رائے بڑھ رہا ہے اور ہندوستان جیسے سیکولر ملک میں مذہب کی بنیاد پر نفرت انگیز جرائم کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ عدالت نے کہا کہ نفرت انگیز تقریر پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جا سکتا۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ اگر ریاست نفرت انگیز تقریر کے مسئلے کو قبول کرے تو ہی اس کا حل نکالا جاسکتا ہے۔ ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ اپنے شہریوں کو ایسے کسی بھی گھناؤنے جرم سے بچانا ریاست کا بنیادی فرض ہے۔ جسٹس کے ایم جوزف اور بی وی ناگارتنا کی بنچ نے کہا’’جب نفرت پر مبنی جرائم کے خلاف کارروائی نہیں کی جاتی ہے، تو ایسا ماحول پیدا ہوتا ہے جو بہت خطرناک ہوتا ہے اور اسے ہماری زندگیوں سے جڑ سے اکھاڑ پھینکنا پڑتا ہے۔ نفرت انگیز تقریر پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جا سکتا‘‘۔ سپریم کورٹ ایک مسلمان شخص کی درخواست پر سماعت کر رہی تھی جس نے الزام لگایا تھا کہ 4 جولائی 2021 کو مذہب کے نام پر اس کے ساتھ زیادتی اور زیادتی کی گئی۔ وہ نوئیڈا سے علی گڑھ جانے کے لیے کار میں سوار ہوئے تھے۔ ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ پولس نے نفرت پر مبنی جرائم کی کوئی شکایت درج کرنے کی زحمت نہیں کی۔ بنچ نے اتر پردیش حکومت کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈیشنل سالیسٹر جنرل (اے ایس جی) کے ایم نٹراج سے کہا’’آج کل نفرت انگیز تقریر پر عام اتفاق رائے ہے۔ ہندوستان جیسے سیکولر ملک میں مذہب کے نام پر نفرت انگیز جرائم کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ اسے جڑ سے اکھاڑ پھینکنا ہوگا اور یہ ریاست کا بنیادی فرض ہے کہ وہ اپنے شہریوں کو ایسے کسی بھی جرم سے بچائے‘‘۔ ان کا کہنا تھا کہ ’اگر کوئی شخص پولس کے پاس جائے اور کہے کہ میں نے ٹوپی پہنی ہوئی تھی اور میری داڑھی کھینچی گئی اور مذہب کے نام پر گالی دی گئی اور پھر بھی کوئی شکایت درج نہیں ہوئی تو یہ مسئلہ ہے۔ شام 6 بجے تک معاملے کی سماعت کرتے ہوئے بنچ نے کہا کہ کیا آپ یہ قبول نہیں کریں گے کہ یہ نفرت انگیز جرم ہے اور کیا آپ اسے قالین کے نیچے دفن کر دیں گے؟ ساتھ ہی عدالت نے کہا کہ ہم کوئی منفی بات نہیں کہہ رہے، ہم صرف اپنے درد کا اظہار کر رہے ہیں۔درخواست گزار کاظم احمد شیروانی کی طرف سے پیش ہونے والے سینئر وکیل حذیفہ احمدی نے کہا کہ 13 جنوری کو عدالت نے ریاستی حکومت سے کیس ڈائری پیش کرنے کو کہا تھا۔ پولس نے دو سال بعد ایف آئی آر درج کی اور وہ بھی ایک کے علاوہ تمام قابل ضمانت جرائم کے ساتھ۔کے ایم نٹراج نے اعتراف کیا کہ پولس افسران کی طرف سے کوتاہی ہوئی ہے اور کہا کہ اے سی پی رینک کے افسر کی سربراہی میں ایک خصوصی تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی گئی ہے۔ قصوروار پولس اہلکاروں کے خلاف تادیبی کارروائی کی گئی ہے۔اس پر عدالت نے کہا کہ ایسی مثال قائم کریں کہ ایسے افسران اپنی ذمہ داری سے انحراف نہیں کر سکتے، تب ہی ہم ترقی یافتہ ممالک کے برابر آ سکتے ہیں۔ جو بھی تھانے آ رہا ہے اسے ملزم نہ سمجھا جائے۔کے ایم نٹراج نے کہا کہ 4 جولائی 2021 کو جب یہ مبینہ واقعہ پیش آیا، متاثرہ لڑکی نوئیڈا کے سیکٹر 37 میں ایک پولس چوکی گئی، جہاں کوئی سینئر پولس افسر نہیں بلکہ کانسٹیبل موجود تھے۔ اس لیے کوئی شکایت درج نہیں ہوئی۔کے ایم نٹراج نے کہا’’پھر وہ جامعہ نگر کے اسپتال گئے اور دہلی پولس کو بیان دیا کہ ان پر لوٹ مار کی گئی، حملہ کیا گیا اور انہیں چوٹیں آئیں۔ انہوں نے کہیں نہیں کہا کہ یہ نفرت انگیز جرم کا معاملہ ہے یا ان پر حملہ کیا گیا ہے کیونکہ وہ مسلمان تھا‘‘۔

Related posts

ای ڈی بورڈ چسپاں ہونے کے باوجود حیدر آبادی زمین مافیاؤں نے بنگلہ پر قبضہ کر نقدی لوٹا

www.samajnews.in

پرینکا نے ہماچل میں پھونکا بگل

www.samajnews.in

بے خوف ہوکر 2مسلم جوانوں کو بولیرو سمیت زندہ جلا دینا ملک کے جمہوری اور آئینی نظام کیلئے بڑا خطرہ: محمد علی ایڈوکیٹ

www.samajnews.in