45.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

سیاسی پارٹیاں ہندو-مسلم منافرت پھیلارہی ہیں، مذہبی رہنما آگے آئیں: مولانا ارشد مدنی

جمعیۃ علماء ہند کے صدر مولانا ارشد مدنی اور ہریدوار میں نرنجنی اکھاڑے کے آچاریہ سوامی آنند گری کے درمیان ہوئی ملاقات میں ہندو-مسلم یکجہتی پر زور ڈالنے کی بات کی گئی

نئی دہلی: جمعیۃ علماء ہند کے صدر مولانا ارشد مدنی اور ہریدوار میں نرنجنی اکھاڑے کے آچاریہ سوامی آنند گری کے درمیان ہوئی ملاقات ان دنوں موضوعِ بحث ہے۔ یہ ملاقات 7 جنوری کو ہوئی تھی اور دونوں مذہبی رہنماؤں نے کچھ اہم موضوعات پر تبادلہ خیال کیا تھا۔ اس ملاقات کے بعد مولانا ارشد مدنی نے کچھ میڈیا اہلکاروں سے بات کی اور بتایا کہ انہوں نے آچاریہ سوامی آنندی گری سے کیا کچھ باتیں کیں۔میڈیا ذرائع کے مطابق مولانا ارشد مدنی نے یکساں سول کوڈ، ہندو-مسلم یکجہتی اور موب لنچنگ کے بڑھتے واقعات پر سوامی آنند گری سے تبادلہ خیال کیا۔ مولانا ارشد مدنی نے میڈیا کو بتایا کہ ’’میں ایک مدت سے کیلاش آنند جی مہاراج سے ملاقات کی خواہش رکھتا تھا، لیکن ہر چیز کا ایک وقت مقرر ہوتا ہے۔ اب جا کر ان سے میری ملاقات ہوئی اور انہوں نے مجھے جو احترام دیا، میں اس کا تہہ دل سے شکرگزار ہوں‘‘۔ ساتھ ہی انھوں نے کہا کہ ’’میں نے مہاراج سے بتایا کہ میں نے یوروپ کے کئی ممالک کا دورہ کیا ہے اور دیگر ممالک بھی گیا ہوں، سبھی جگہ ہر ممالک کے لوگ ملے جو اپنی شکل و صورت، پہناوے اور زبان سے پہچانے جاتے ہیں۔ یہ سب شہری علاقوں میں ہی رہتے ہیں کیونکہ دیہی علاقوں میں معاشی سرگرمی دیکھنے کو نہیں ملتی۔ لیکن ہندوستان میں آپ کسی بھی شہر یا گاؤں چلے جائیں، وہاں ہندو اور مسلمان سبھی ایک ساتھ مل جائیں گے، جو شکل و صورت، زبان اور پہناوے میں ایک ہی طرح کے ہوں گے‘‘۔مولانا ارشد مدنی مزید کہتے ہیں کہ ’’ہندوستان میں سبھی مذاہب کے لوگ مل جل کر بہت پیار و محبت سے رہتے نظر آ جائیں گے۔ ان کا خاندان کتنی صدیوں سے یہاں بسا ہوا ہے، یہ انہیں خود بھی نہیں معلوم۔ اس سے پتہ چلتا ہے کہ ان کا خون ایک ہے، برادریاں ایک ہیں، شکل و صورت ایک ہے۔ لیکن حکومت ہے جس نے لوگوں میں تفریق پیدا کر دی ہے۔ کوئی بھی شخص، چاہے جس بھی مذہب سے تعلق رکھتا ہو، وہ لڑائی جھگڑے کی تائید نہیں کرے گا‘‘۔ ان کا کہنا ہے کہ ’’میں نے موہن بھاگوت سے بھی ملاقات کے دوران یہ بات کہی تھی اور مہاراج سے بھی یہی بات کہی ہے۔ فرقہ پرست پارٹیاں آگ لگانے کا کام کر رہی ہیں، لیکن ہم مذہب کے ماننے والے ہیں اور ہماری طرف سے آواز اٹھنی چاہیے، ہم اگر پیار و محبت پھیلانے کے لیے آواز اٹھائیں گے تو یہ بے اثر نہیں ہوگی۔ کچھ سیاسی پارٹیاں ہیں جو ہندو-مسلم منافرت پھیلانے کا کام کر رہی ہیں، ان کے خلاف آواز اٹھانی چاہیے‘‘۔جب مولانا ارشد مدنی نے سوامی آنند گری مہاراج سے ملاقات کی تو انہوں نے مولانا کو بھگوا شال پہنائی اور اتراکھنڈ کی ٹوپی بھی پہنائی۔ اس سلسلے میں جب ایک نامہ نگار نے ان سے سوال کیا اور بھگوا شال پر رد عمل جاننا چاہا تو انہوں نے کہا کہ ’’بھگوا رنگ میں کوئی مسئلہ نہیں، اس کو میں دل کی گہرائیوں سے قدر کی نظر سے دیکھتا ہوں‘‘۔ پھر انہوں نے جبراً مذہب تبدیلی کے بارے میں کہا کہ ’’زبردستی تو مذہب کی تبدیلی ہو ہی نہیں سکتی۔ مذہب نام ہے دل سے اصول اور ایمان کو اختیار کرنے کا۔ اگر کوئی زور دے کر کسی کا مذہب بدلتا ہے، تو اس پر اعتبار کیا ہی نہیں جا سکتا۔ اس کا مذہب تبدیل ہی نہیں ہوگا۔‘‘یکساں سول کوڈ کے تعلق سے ایک سوال کے جواب میں مولانا ارشد مدنی نے کہا کہ ’’سیکولرزم کا مطلب ہے کہ ہر آدمی کو اپنے پسند کا مذہب اختیار کرنے کا حق ملے اور ہندوستان میں دستور نے سبھی کو یہ اختیار دیا ہے۔ ہندوستان میں حکومت کا کوئی اپنا مذہب نہیں ہے۔ ہم اپنے اس دستور کو مانتے ہیں، ہر آدمی کو اپنی پسند کے مطابق اپنے مذہب کو اختیار کرنے کا حق ہے۔ حکومت ایک ہی طرح کا اصول ماننے کے لیے سبھی مذاہب کے لوگوں کو مجبور نہیں کر سکتی۔ یکساں سول کوڈ کا مطلب ہے ایک قانون کو نافذ کرنا، یہ کسی بھی طرح مناسب نہیں‘‘۔

Related posts

پارلیمنٹ کا خصوصی اجلاس ستمبر میں طلب، سیاسی حلقوں میں چہ می گوئیاں شروع

www.samajnews.in

11سال میں 16لاکھ بھارتیوں نے چھوڑی شہریت

www.samajnews.in

سی بی آئی نے منیش سسودیا کو کیا گرفتار

www.samajnews.in