41.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

زانیوں کیلئے ’آزادی کا امرت مہوتسو‘ چل رہا ہے

نئی دہلی، سماج نیوز: سپریم کورٹ نے 19 سالہ لڑکی کے ساتھ اجتماعی عصمت دری، لوہے کی سلاخ سے اس کے جسم پر داغ لگانے اور تیزاب سے اس کی آنکھیں جلانے والے تین ملزمان کو بری کر دیا۔ بلقیس بانو پر زیادتی کرنے والوں کو رہا کرنے کا اثر ہوا یا جج نے کوئی اور قانون پڑھا ہے، لیکن فی الحال یہ وحشی مجرم رہا ہو چکے ہیں۔ آیا یہ عصمت دری کرنے والے مہذب تھے یا نہیں، برہمن تھے یا نہیں، اس پر بی جے پی لیڈروں نے ابھی تک کوئی بیان نہیں دیا ہے۔ماں بلک بلک کر رو رہی ہے، باپ انصاف کے مرنے کا ماتم کر رہا ہے، آس پاس بیٹھے لوگوں نے امیدوں کو جلایا ہے۔ نظام چلانے والے لوگ زیادتی کرنے والوں کو تحفظ دینے کی اتنی کوشش کیوں کر رہے ہیں! پتہ نہیں اس ملک کو کیا ہو گیا ہے۔19 سالہ لڑکی کو تین بدمعاشوں نے اغوا کر کے وحشیانہ زیادتی کا نشانہ بنایا، اس کے جسم کو سگریٹ سے جلایا، گاڑی میں رکھے خطرناک ہتھیاروں کا استعمال کر کے اس کے اعضاء کو تباہ کر دیا۔ظلم و بربریت اس قدر چھا گئی کہ یہیں بھی نہ رکی، اس نے گرم لوہے سے پورے جسم کو داغ دیا اور آنکھوں پر تیزاب ڈال دیا۔ لڑکی کی لاش کے ساتھ جتنے گھنونے کام کیے جا سکتے تھے اسے موت کی حالت میں وہاں پھینک دیا گیا۔ یہ راجدھانی دہلی کا پورا واقعہ ہے اور سال 2012 تھا جس کے آخر میں نربھیا کے ساتھ ایسا گھناؤنا جرم ہوا۔ اب 10 سال بعد اس گینگ ریپ کیس کا فیصلہ آ گیا ہے۔ تینوں ریپ کرنے والوں کو رہا کر دیا گیا۔جن لوگوں کو نچلی عدالت نے موت کی سزا سنائی تھی، جنہیں ہائی کورٹ نے بھی سزائے موت سنائی تھی، ان کی سزا کو سپریم کورٹ نے تبدیل کر دیا تھا۔ ماں بلک بلک کر رو رہی ہے، سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اب کہاں جائیں؟ اس کی بیٹی کو ظلم کا نشانہ بنایا گیا پھر بھی اسے لاوارث کیا جا رہا ہے، اس کا یہ دکھ کون بتائے؟سپریم کورٹ کے سامنے کھڑے ہیں، صبح سے رو رہے ہیں۔ عدالت میں انصاف کیوں نہیں ملتا یہی سوال دہرایا جا رہا ہے۔ماں کی حالت خراب ہے، وہ زیادہ بول نہیں پا رہی ہیں، اس لڑائی میں جو سماجی کارکن ساتھ دے رہے ہیں وہ کچھ کہہ رہے ہیں، سنو وہ کیا کہہ رہی ہیں۔(سماجی کارکن کا کہنا ہے کہ اگر عمر قید کی سزا بھی ہوتی تو ہم اعتراض کرتے کہ موت سے کم سزا نہیں ہونی چاہیے۔ لیکن یہاں اس فیصلے نے حیران کر دیا، گینگ ریپ کے مجرموں کو رہا کر دیا گیا۔ اس ملک کی عدلیہ کا مکمل اعتماد ختم ہو گیا)یوگیتا بھیانہ جو کچھ بھی کہہ رہی ہیں، گویا وہ کسی ظالم حکمران کے دور کی کہانی بیان کر رہی ہیں۔ 21ویں صدی کی تیسری دہائی میں جج ایسا فیصلہ دے رہے ہیں، وہ اس پر یقین نہیں کر پا رہے ہیں۔ تصور کریں فروری 2012 میں جب راجدھانی دہلی کے اندر اس لڑکی کے ساتھ ایسا گھناؤنا جرم پیش آیا تھا، تب ازخود نوٹس لیتے ہوئے سپریم کورٹ چند دنوں یا چند مہینوں میں ساری کارروائی مکمل کر لیتی اور مجرموں کو سخت سزا سنا دیتی۔

Related posts

شہزادی ڈائنا کی طلاق کی وجہ کیا تھی…

www.samajnews.in

الوداع شردیادو! 75 سال کی عمر میں لی آخری سانس

www.samajnews.in

دہلی کی ترقی کیلئے کانگریس کو ووٹ دیں: سید عدنان اشرف

www.samajnews.in