33.1 C
Delhi
جولائی 24, 2024
Samaj News

5بچوں کی قاتل ماں نے جرم کے 16 سال بعد اپنے لیے موت پسند کیا

نئی دہلی: اپنے ہی پانچ بچوں کے قتل کے جرم میں عمرقید کی سزا پانے والی بلجیم کی خاتون کو ’یوتھینائز‘ کر کے موت کی نیند سلا دیا گیا ہے۔’یوتھینائز‘ کسی لاعلاج بیماری یا شدید کرب میں مبتلا شخص کو اُس کی مرضی سے موت دینے کے عمل کو کہا جاتا ہے۔ بلجیم سمیت کئی یورپی ممالک میں قانونی طور پر (موت کے) اس عمل کی اجازت ہے جس میں ناقابل برداشت درد یا ناقابل علاج نفسیاتی تکلیف میں مبتلا شخص کو اس کی مرضی سے موت کی نیند سلا دیا جاتا ہے۔جینیویو لرمائتھ نے 16 سال قبل اپنے پانچ بچوں کو قتل کیا تھا۔ بلجیم کے شہر نیویلس میں قتل کا یہ واقعہ 28 فروری 2007 کو پیش آیا جب جینیویولرمائتھ نے اپنی چار بیٹیوں اور ایک بیٹے کا قتل کیا جن کی عمریں 3 سے 14 سال کے درمیان تھیں۔ قتل کے اس واقعے کے وقت بچوں کے والد گھر سے باہرتھے۔جینیویولرمائتھ نے بچوں کو جان سے مارنے کے بعد اپنی جان لینے کی کوشش بھی کی تاہم وہ اس میں ناکام رہیں اور پھر طبی مدد کے بعد ان کو بچا لیا گیا۔اپنے پانچ بچوں کو قتل کرنے کے جرم میں 56 سالہ جینیویو کو 2008 میں عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی۔2019 میں انھیں علاج کے لیے نفسیاتی ہسپتال بھی منتقل کیا گیا تھا۔ماں کے ہاتھوں بچوں کے اس ہولناک قتل کی واردات اور اس کے بعد کے مقدمے کی کارروائی نے بلجیم کے لوگوں کو جھنجوڑ کے رکھ دیا تھا۔مقدمے کی سماعت کے دوران جینیویو لرمائتھ کے وکلا نے موقف اختیار کیا کہ اُن کی مؤکلہ کو شدید ذہنی عارضہ لاحق ہے اور انھیں اس صورت میں جیل نہیں بھیجنا چاہیے، تاہم جیوری نے اسے ’سوچا سمجھا قتل کا منصوبہ‘ قرار دے کر انھیں مجرم قرار دیا اور انھیں عمر قید کی سزا سنائی گئی۔2010 میں جینیویو کی جانب سے ایک سول مقدمہ بھی دائر کیا گیا تھا تاہم 10 سال تک قانونی جنگ لڑنے کے بعد وہ مقدمہ کی پیروی سے دستبردار ہو گئیں۔جینیویو کے وکیل نے اس بارے میں بتایا: ’موت کے اس مخصوص طریقہ کار کے لیے ان کی موکل جینیویو لرمائتھ کے لیے مختلف طبی آراء کو سامنے رکھا گیا اور پھر اس فیصلے کی پیروی کی گئی۔‘ماہر نفسیات ایملی ماریوئت نے آر ٹی ایل ٹی وی کو بتایا کہ جینیویو لرمائتھ نے ’اپنے بچوں کی موت کے احترام کی علامت‘ کے طور پر اپنی زندگی کے خاتمے کے لیے 28 فروری کا دن منتخب کیا۔ماہرنفسیات ایملی ماریوئت نے کہا کہ ’ان کی زندگی کا اختتام اسی راستے کی منزل ہے جس کا سفر انھوں نے شروع کیا تھا کیونکہ وہ بنیادی طور پر اپنی زندگی کا خاتمہ کرنا چاہتی تھیں جس کے لیے انھوں نے پہلے اپنے بچوں کی جان لی۔‘بلجیم سمیت کئی یورپی ممالک میں قانونی طور پر (موت کے) اس عمل کی اجازت ہے جس میں ناقابل برداشت درد یا ناقابل علاج نفسیاتی تکلیف میں مبتلا شخص کو اس کی مرضی سے موت کی نیند سلا دیا جاتا ہے۔موت کے اس فیصلے میں متاثرہ شخص کی اجازت ضروری سمجھی جاتی ہے اور انھیں اپنی زندگی کے خاتمے کی اس خواہش کو معقول اور مربوط انداز میں ظاہر کرنے کے قابل بھی ہونا چاہیے۔بلجیم میں موت کا خود انتخاب کرنے کے اس طریقہ کار سے سنہ 2022 میں تقریبا دو ہزار 966 افراد ہمیشہ کی نیند سو گئے اور 2021 کے مقابلے میں ان اموات میں 10 فیصد کا اضافہ دیکھا گیا۔(بشکریہ: بی بی سی)

Related posts

فلم ’پٹھان‘ نے چار دن میں کمائے 400 کروڑ روپے

www.samajnews.in

امریکہ میں برفیلے طوفان سے 28کی موت، 3100سے زائد پروازیں منسوخ

www.samajnews.in

جامعہ دارالسلام عمرآباد کے جنرل سکریٹری اور آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے نائب صدر معروف عالم دین مولانا کاکا سعید احمد عمری صاحب کا انتقال

www.samajnews.in