45.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

…توڈوب جائیں گے ممبئی اور نیویارک سمیت دنیا کے کئی بڑے شہر

اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوٹیرس نے متنبہ کیا’’ہر براعظم کے بڑے شہروں بشمول قاہرہ، لاگوس، ماپوتو، بنکاک، ڈھاکہ، جکارتہ، ممبئی، شنگھائی، کوپن ہیگن، لندن، لاس اینجلس، نیویارک، بیونس آئرس اور سینٹیاگو شہر اس کا سامنا کر سکتے ہیں‘‘

نئی دہلی، سماج نیوز: اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹیرس نے موسمیاتی تبدیلی کے حوالے سے دنیا کو بڑا انتباہ دیا ہے۔ انہوں نے کہا’’ممبئی اور نیویارک جیسے بڑے شہروں کو سطح سمندر میں اضافے کے سنگین اثرات کا سامنا ہے، عالمی برادری کو موسمیاتی بحران سے نمٹنے کے لیے سنجیدہ کوششیں کرنے کی ضرورت ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ’’سمندری سطح میں اضافہ مستقبل کو غرق کر رہا ہے۔ سطح سمندر میں اضافہ اپنے آپ میں ایک خطرہ ہے‘‘۔ دنیا بھر میں چھوٹے جزیروں، ترقی پذیر ریاستوں اور دیگر نشیبی علاقوں میں رہنے والے لاکھوں لوگوں کے لیے گٹیرس نے ‘سطح سمندر میں اضافہ – بین الاقوامی امن اور سلامتی کے لیے مضمرات پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے مباحثے میں کہا کہ ترقی پریشانی کا باعث ہے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ سمندر کے بڑھتے ہوئے کچھ نشیبی علاقوں اور یہاں تک کہ ممالک کے وجود کو خطرہ لاحق ہو سکتا ہے۔ گٹیرس نے کہا کہ عالمی اوسط سمندر کی سطح 1900 کے بعد سے پچھلے 3000 سالوں میں کسی بھی پچھلی صدی کے مقابلے میں زیادہ تیزی سے بڑھی ہے اور یہ کہ عالمی سمندر پچھلی صدی میں پچھلے 11000 سالوں میں کسی بھی وقت کے مقابلے میں زیادہ تیزی سے گرم ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر گلوبل وارمنگ کو ‘معجزانہ طور پر 1.5ڈگری سیلسیس تک محدود رکھا جائے تو بھی عالمی موسمیاتی ادارے کے مطابق سمندر کی سطح میں اضافہ اب بھی نمایاں ہوگا۔انہوں نے خبردار کیا’’ہر براعظم کے بڑے شہروں کو شدید اثرات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے، جن میں قاہرہ، لاگوس، ماپوٹو، بنکاک، ڈھاکہ، جکارتہ، ممبئی، شنگھائی، کوپن ہیگن، لندن، لاس اینجلس، نیویارک، بیونس آئرس اور سینٹیاگو شامل ہیں‘‘۔ اقوام متحدہ کے سربراہ نے اس بات پر زور دیا کہ یہ خطرہ تقریباً 900 ملین لوگوں کے لیے خاص طور پر سنگین ہے جو ساحلی علاقوں میں کم اونچائی پر رہتے ہیں۔ یہ زمین پر دس میں سے ایک شخص ہے، کچھ ساحلی علاقوں میں پہلے ہی سطح سمندر میں اضافے کی اوسط شرح تین گنا زیادہ ہے۔بڑھتے ہوئے سمندروں کے اثرات پہلے ہی عدم استحکام اور تصادم کے نئے ذرائع پیدا کر رہے ہیں۔ گٹیرس نے اجلاس کو بتایا انہوں نے مزید کہا کہ عالمی برادری کو عدم تحفظ کی اس بڑھتی ہوئی لہر کا فوری ایکشن کیساتھ جواب دینا چاہیے۔ خاص طور پر بڑھتے ہوئے سمندروں کی بنیادی وجوہات کا نوٹس لینا چاہیے۔ موسمیاتی بحران کےاقوام متحدہ کے سربراہ نے کہا کہ ’’لوگ اپنے گھروں کو کھو رہے ہیں۔ ہمیں متاثرہ آبادیوں کے تحفظ اور ان کے ضروری انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے کارروائیاں جاری رکھنی چاہئیں‘‘۔ اقوام متحدہ کے سربراہ نے کہا کہ بڑھتے ہوئے سمندروں سے پیدا ہونے والے تباہ کن سیکورٹی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے سیاسی اقدامات کی ضرورت ہے، سلامتی کونسل کا اہم کردار ہے۔ ہم سب کو اس اہم مسئلے پر بات کرتے رہنا چاہیے اور اس بحران کی اگلی خطوط پر موجود لوگوں کی زندگیوں، معاش اور برادریوں کی مدد کے لیے کام کرنا چاہیے۔

Related posts

آل نیپال مسابقہ قرآن مجید مملکت سعودی عرب کا ایک تحسین عمل

www.samajnews.in

تین ماہ قبل دوسری بیوی کا ہوا تھا انتقال

www.samajnews.in

نیپال میں منعقد پہلا عظیم الشان مسابقہ حفظ قرآن کریم بحسن خوبی اختتام پذیر

www.samajnews.in