33.1 C
Delhi
جولائی 24, 2024
Samaj News

راہل گاندھی کے کسی سوال کا جواب نہیں دیئے وزیر اعظم مودی

لوک سبھا میں صدر دروپدی مرمو کے خطاب پر بحث کے دوران کانگریس پر کیے کئی طنز ،ملک اور بیرون ملک ہندوستان کے وقار میں اضافہ ہوا ہے:مود

نئی دہلی، سماج نیوز: وزیر اعظم نریندر مودی نے بدھ کو لوک سبھا میں صدر دروپدی مرمو کے خطاب کا جواب دیا۔ پی ایم مودی نے 2004 سے 2014 کی دہائی کو ‘گمشدہ دہائی بتاتے ہوئے ایوان میں کانگریس پر کئی طنز کیا۔ پی ایم کی تقریر کے درمیان اپوزیشن کے کئی اراکین اسمبلی ایوان سے واک آؤٹ کر گئے، لیکن کانگریس کے رکن پارلیمنٹ ششی تھرور سب سے پہلے واپس آئے۔ اسی لیے پی ایم مودی کی نظریں ششی تھرور پر پڑیں۔ وزیر اعظم مسکرائے اور کہا- ‘شکریہ ششی جی۔ اس دوران بی جے پی کے کچھ ممبران نے ہنستے ہوئے کہا- ‘کانگریس میں پھوٹ پڑ گئی ہے، کانگریس میں پھوٹ پڑ گئی ہے۔ اس کے بعد پی ایم مودی بھی ہنس پڑے۔ تاہم کچھ ہی دیر میں کانگریس کے باقی ارکان اسمبلی بھی ایوان میں واپس آگئے۔ ارکان پارلیمنٹ کے واک آؤٹ پر اسپیکر اوم برلا نے انہیں روک دیا اور کہا کہ یہ پارلیمانی روایات کے مطابق نہیں ہے۔ آپ حقائق کے بغیر بات کرتے ہیں اور سنتے نہیں ہیں۔ پھر کچھ دیر توقف کے بعد وزیراعظم نے دوبارہ تقریر شروع کی۔ وزیراعظم نے اپنی تقریر میں کسی کا نام نہیں لیا تاہم اپوزیشن پر شدید حملہ کیا۔ تاہم پی ایم مودی نے لوک سبھا میں اپنی 85 منٹ کی تقریر میں راہل گاندھی کے پوچھے گئے کسی بھی سوال کا جواب نہیں دیا۔2014 سے پہلے کی دہائی گھوٹالوں کی دہائی تھی۔پی ایم مودی نے کہا- ‘سب سے زیادہ گھوٹالے یو پی اے کے 10 سالوں میں ہوئے۔ ان کی مایوسی کی وجہ یہ ہے کہ ملک کا پوٹینشل سامنے آرہا ہے۔ 2004 سے 2014 تک یو پی اے نے ہر موقع کو مصیبت میں بدل دیا۔ جب ٹیکنالوجی کی معلومات کا دور بڑھ رہا تھا، اسی وقت وہ 2G میں پھنس گئے۔ سول نیوکلیئر ڈیل کی بحث کے دوران وہ کیش فار ووٹ میں پھنس گئے۔وزیر اعظم نے یو پی اے کے 10 سالہ دور حکومت پر تنقید کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ انہوں نے کہا کہ 2014 تک کس طرح کانگریس کی یو پی اے حکومت مواقع کو مصیبت میں بدلتی تھی۔ لیکن آج صورت حال ایسی نہیں ہے۔ وزیراعظم یہیں نہیں رکے۔ پی ایم مودی نے کہا- ‘کئی اپوزیشن ممبران میرا-تیرا کر رہے تھے۔ میں سمجھتا تھا کہ ملک کے عوام، ملک کے انتخابات کے نتائج ایسے لوگوں کو ایک پلیٹ فارم پر ضرور لائیں گے۔ ایسا نہیں ہوا، لیکن ان لوگوں کو ای ڈی کا شکریہ ادا کرنا چاہیے، جس کی وجہ سے وہ ایک پلیٹ فارم پر آئے۔کانگریس کی بربادی پر بھی سخت طنزاپنی تقریر میں پی ایم مودی نے کانگریس کی موجودہ صورتحال پر بھی طنز کیا۔ انہوں نے کہا، ‘پچھلے سالوں میں ہارورڈ میں مطالعہ ہوا ہے. ان کا موضوع تھا – ہندوستان کی کانگریس پارٹی کا عروج اور زوال۔ مجھے یقین ہے کہ مستقبل میں نہ صرف ہارورڈ بلکہ بڑی یونیورسٹیوں میں بھی کانگریس کے فضلے پر مطالعہ کیا جائے گا۔ اتنا ہی نہیں کانگریس کو تباہ کرنے والوں پر بھی مطالعہ کیا جائے گا۔ دشینت کمار نے ایسے لوگوں کے لیے ایک اچھی بات کہی ہے – آپ کے پیروں کے نیچے زمین نہیں ہے، حیرت انگیز بات یہ ہے کہ آپ کو پھر بھی یقین نہیں آرہا ہے۔اپوزیشن نظام کو ناکامی پر گالی دیتی ہے۔پی ایم مودی نے کہا- جمہوریت میں تنقید بہت ضروری ہے۔ ہندوستان جمہوریت کی ماں ہے۔ تنقید جمہوریت کی مضبوطی کے لیے ہوتی ہے لیکن لوگوں نے تنقید کا موقع گنوا دیا۔ ہر طرف الزامات، گالیاں۔ الیکشن ہارو تو ای وی ایم کو خراب کہہ کر الیکشن کمیشن کو گالی دو، فیصلہ حق میں نہ ہو تو سپریم کورٹ کو گالی دو۔ملک کے 140 کروڑ عوام میری حفاظت کی ڈھال ہیں۔پی ایم مودی نے کہا- مودی پر بھروسہ اخبار کی سرخیوں سے نہیں پیدا ہوتا، ٹی وی پر چمکتے چہروں سے نہیں ہوتا۔ ہم نے ملک کے عوام کے لیے، ملک کے مستقبل کے لیے اپنی جانیں نچھاور کی ہیں۔ آپ کی گالیوں اور الزامات کو کروڑوں ہندوستانیوں سے گزرنا پڑے گا۔ 140 کروڑ لوگ میری حفاظت کی ڈھال ہیں۔ آپ اس حفاظتی ڈھال کو جھوٹ کے ہتھیار سے نہیں گھس سکتے۔ یہ ایمان کی حفاظتی ڈھال ہے۔جموں کشمیر اور شمال مشرق کا بھی ذکر کیا گیا۔راہل گاندھی کا نام لیے بغیر پی ایم مودی نے کہا، ‘جو لوگ ابھی جموں و کشمیر سے آئے ہیں انہوں نے دیکھا ہوگا کہ وہ کتنے فخر کے ساتھ وہاں جا سکتے ہیں۔ پچھلی صدی میں میں نے جموں و کشمیر میں یاترا بھی کی تھی اور لال چوک پر ترنگا لہرانے کا عہد لیا تھا۔ لال چوک میں ترنگا لہرانے کے بعد میں نے کہا تھا – عام طور پر 15 اگست اور 26 جنوری کو جب ترنگا لہرایا جاتا ہے تو ہندوستان کے آرڈیننس اور بارود سلامی دیتے ہیں۔ آج جب لال چوک پر ترنگا لہرایا جا رہا ہے تو دشمن ملک کی بارود سلامی دے رہی ہے۔ ساتھ ہی شمال مشرق کے بارے میں پی ایم نے کہا کہ میں اپوزیشن سے کہنا چاہتا ہوں کہ شمال مشرق کو ایک بار دیکھیں۔ وہاں کے حالات کیسے تھے اور اب کیسے ہیں؟اپوزیشن کو مشورہ دیتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا، ‘وقت ثابت کر رہا ہے کہ جو لوگ یہاں (اقتدار میں) بیٹھے تھے، وہ وہاں (اپوزیشن میں) جا کر بھی ناکام ہوئے۔ ملک تفریق سے گزر رہا ہے۔ وقت کا تقاضا ہے کہ آج مایوسی میں ڈوبے ہوئے لوگ صحت مند ذہن کے ساتھ خود غور و فکر کریں۔

Related posts

آرٹیکل 370 ختم کرنے کا فیصلہ درست: سپریم کورٹ

www.samajnews.in

بقیع قبرستان سے گنبد ومزارات کا ازالہ، صحابۂ کرام کی توہین یا فرمان نبوی کی تعمیل

www.samajnews.in

راہل گاندھی پھر شروع کریں گے ’بھارت جوڑو یاترا‘

www.samajnews.in