42.1 C
Delhi
مئی 19, 2024
Samaj News

افغانستان: یونیورسٹیوں کے دروازے خواتین کیلئے بند

کابل: افغانستان میں اعلیٰ تعلیم کے وزیر مولوی ندا محمد ندیم کے خط کے مطابق طالبان حکومت نے یونیورسٹیوں میں خواتین کے لیے تعلیم پر پابندی عائد کر دی ہے۔طالبان حکومت کا یہ حکم فوری طور پر لاگو کر دیا گیا ہے اور اس پر آئندہ پیشرفت تک عمل جاری رہے گا۔ اس حکم کے تحت خواتین کے لیے تعلیم تک رسائی روکی گئی ہے۔ یونیورسٹی کی ایک طالبہ نے بتایا ہے کہ وہ یہ خبر سننے کے بعد سے رو رہی ہیں۔ افغانستان میں پہلے ہی خواتین کو اکثر سیکنڈری سکولوں میں جانے سے روک دیا گیا ہے۔تین ماہ قبل افغانستان بھر میں ہزاروں لڑکیوں اور خواتین نے یونیورسٹی میں داخلے کا امتحان دیا تھا۔ مگر طالبان نے مضامین کے انتخاب کے حوالے سے ان پر پابندیاں لگائیں۔

خواتین پر عائد کردہ پابندی کے تحت وہ وٹنری سائنس، انجینئرنگ، اکنامکس اور زراعت میں تعلیم حاصل نہیں کر سکتیں جبکہ صحافت میں بھی ان کا جانا مشکل ہوگیا تھا۔گذشتہ سال کابل پر طالبان کے قبضے کے بعد افغانستان کی یونیورسٹوں میں مرد و خواتین کے لیے الگ الگ کلاس روم اور داخلی راستے متعارف کرائے گئے۔ طالبات کو صرف خواتین پروفیسر یا معمر مرد پڑھا سکتے ہیں۔طالبان دور میں افغانستان کا تعلیمی شعبہ بُری طرح متاثر ہوا ہے۔ گذشتہ سال امریکی و دیگر غیر ملکی افواج کے انخلا کے بعد سے تربیت یافتہ ادبی شخصیات ملک چھوڑنے پر مجبور ہوئی ہیں۔ملک کی معیشت، جو کہ گذشتہ دہائیوں کے دوران غیر ملکی امداد پر منحصر تھی، بھی متاثر ہو رہی ہے۔

فلاحی تنظیموں نے جزوی (اور کچھ نے پوری طرح) اپنی امداد روک دی ہے۔ ان کی جانب سے یہ فیصلہ اس وقت کیا گیا جب طالبان نے لڑکیوں کو سیکنڈری سکولوں میں تعلیم حاصل کرنے سے روکا۔افغانستان اسکولوں اور یونیورسٹیوں کے اساتذہ کئی ماہ سے اپنی تنخواہوں کے منتظر ہیں۔ امریکہ، برطانیہ اور اقوام متحدہ نے طالبان حکومت کے اس حالیہ فیصلے کی مذمت کی ہے۔ امریکہ اور دیگر مغربی ممالک نے طالبان کی حکومت کو تسلیم کرنے سے قبل ملک میں خواتین کی تعلیم میں بہتری کی شرط رکھی تھی۔انسانی حقوق کی تنظیم ہیومن رائٹس واچ نے طالبان کے فیصلے کو ’شرمناک‘ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ افغانستان میں لڑکیوں اور خواتین کے لیے تعلیم حاصل کرنے کے حق کی خلاف ورزی ہے۔ان کے پیغام میں کہا گیا ہے کہ ’طالبان روز بروز یہ واضح کرتے جا رہے ہیں کہ وہ افغان شہریوں، خاص کر خواتین، کے بنیادی حقوق کا احترام نہیں کرتے۔‘

اس پابندی پر ردعمل دیتے ہوئے ایک طالبہ نے بی بی سی کو بتایا کہ ان کے خیال میں طالبان خواتین اور ان کی طاقت سے خوفزدہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ طالبان نے ’وہ واحد پُل تباہ کر دیا جو مجھے میرے مستقبل سے جوڑ سکتا تھا‘’میں کیسے رد عمل دوں؟ مجھے یقین تھا کہ میں پڑھ کر اپنا مستقبل بدل سکتی ہوں یا اپنی زندگی میں روشنی لا سکتی ہوں۔ لیکن انھوں نے اسے تباہ کر دیا۔‘ایک اور خاتون نے طالبان کے قبضے کے بعد اپنی تعلیم جاری رکھنے کی کوشش میں درپیش مشکلات کا ذکر کیا۔ نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر وہ کہتی ہیں کہ ’ہم اپنے بھائی، والد، معاشرے کے ساتھ اور یہاں تک کہ حکومت سے لڑے۔ ہم اپنی تعلیم جاری رکھنے کے قابل ہونے کے لیے ایک مشکل صورتحال سے گزرے۔‘ان کا کہنا ہے کہ ’اس وقت کم از کم میں خوش تھی کہ میں یونیورسٹی سے فارغ التحصیل ہو کر اپنے خواب پورے کر سکوں گی۔ لیکن اب میں خود کو کیا بتاؤں؟‘افغان یونیورسٹیوں میں خواتین پر پابندی کے فیصلے کے بعد سوشل میڈیا صارفین بھی طالبان حکومت پر تنقید کر رہے ہیں۔(بی بی سی اردو)

Related posts

دہلی: AMPاور خادمِ انسانیت فاؤنڈیشن کا جاب فیئر کامیابی سے ہمکنار

www.samajnews.in

سپریم کورٹ نے دلایا ہلدوانی کے لوگوں کو انصاف:عمران پرتاپ گڑھی

www.samajnews.in

یکطرفہ گرفتاری اور انہدامی کارروائی پر روک لگائی جائے

www.samajnews.in