42.1 C
Delhi
مئی 19, 2024
Samaj News

شرد پوار کا نام شاداب ہوتا تو اسے بی ٹیم کا خطاب ملتا :اسد الدین اویسی

نئی دہلی:آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) کے سربراہ اسد الدین اویسی نے ناگالینڈ میں این ڈی پی پی-بی جے پی مخلوط حکومت کی حمایت کرنے پر نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) پر تنقید کی ہے۔ ناگالینڈ میں نیشنلسٹ ڈیموکریٹک پروگریسو پارٹی (این ڈی پی پی) – بی جے پی مخلوط حکومت کی حمایت کرنے کے لئے این سی پی پر تنقید کرتے ہوئے، انہوں نے کہا، اگر شرد ’شاداب‘ ہوتا، تو اسے ’بی ٹیم‘ کہا جاتا اور اس کے ساتھ ظلم ہوتا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے کبھی بی جے پی حکومت کی حمایت نہیں کی اور نہ کبھی کروں گا۔ انہوں نے کہا کہ یہ دوسری بار ہے جب این سی پی نے بی جے پی کو حمایت دی ہے۔ یہ زیادہ دیر تک نہیں چل سکتا۔ شمال مشرق کے این سی پی انچارج نریندر ورما نے حال ہی میں کہا کہ وزیراعلیٰ نیفیو ریو کی قیادت والی حکومت کی حمایت کرنا ’’ریاست ناگالینڈ کے وسیع تر مفاد میں‘‘ ہے۔ ناگالینڈ این سی پی کے انچارج نریندر ورما نے یہ بھی کہا کہ پارٹی سپریمو شرد پوار نے دیگر سیاسی جماعتوں کے ساتھ وزیراعلیٰ نیفیو ریو کی حمایت کو منظوری دے دی ہے۔ ورما کے بیان پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے اسد الدین اویسی نے این سی پی سربراہ شرد پوار پر تنقید کی۔ حال ہی میں ختم ہونے والے 60 سیٹوں کے اسمبلی انتخابات میں، بی جے پی-این ڈی پی پی اتحاد نے 37 سیٹیں جیت کر اکثریت کا ہندسہ عبور کیا۔ نتیجے کے طور پر، این ڈی پی پی-بی جے پی اتحاد کسی دوسری پارٹی کی حمایت کے بغیر حکومت بنانے میں کامیاب رہا۔ ناگالینڈ قانون ساز اسمبلی میں اہم اتحادی شراکت داروں میں این ڈی پی پی 25، بی جے پی 12، نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) 6، نیشنل پیپلز پارٹی (این پی پی) 5، ناگا پیپلز فرنٹ (این پی ایف) 2، آزاد 4، جنتا دل (یونائیٹڈ) 1، لوک جن شکتی پارٹی (ایل جے پی) رام بلاس) نے 2 اور ریپبلکن پارٹی آف انڈیا (اٹھاوالے) نے 2 سیٹیں جیتی ہیں۔

Related posts

قطر میں بھارتی بحریہ کے 8 سابق افسران کو سزائے موت، فیصلے سے حیران بھارت کرے گا چیلنج

www.samajnews.in

بجلی سبسڈی گھوٹالہ: اجے ماکن، ہارون یوسف اورنریندرناتھ نےلیفٹیننٹ گورنر سے کی ملاقات

www.samajnews.in

مولاناحفیظ الرحمٰن اعظمی عمریؒ: باکمال شخصیت-بے مثال انسان

ادارۂ تحقیقات اسلامی جامعہ دارالسلام عمرآباد کی عظیم کوشش:

www.samajnews.in