45.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

کورونا کا ایسا خوف! نابالغ بیٹے کیساتھ ماں 3سال خود کو گھر میں رکھا قید

نئی دہلی، سماج نیوز: ہریانہ کے گڑگاؤں کے چکر پور میں ایک 33 سالہ خاتون نے اپنے نابالغ بیٹے کے ساتھ تین سال تک خود کو کرائے کے مکان میں قید رکھا۔ اس نے ایسا کورونا کی وبا سے بچنے کے لیے کیا۔ پولس کے مطابق یہ واقعہ منگل کو اس وقت سامنے آیا جب اہلکاروں کی ایک ٹیم دونوں کو گھر سے باہر لے آئی۔ پولس ٹیم، محکمہ صحت اور چائلڈ ویلفیئر ڈیپارٹمنٹ کے اہلکاروں نے مرکزی دروازہ توڑ کر منمن مانجھی اور اس کے 10 سالہ بچے کو گھر سے باہر نکالا۔ بعد میں ماں بیٹے کی جوڑی کو گروگرام کے سول اسپتال لے جایا گیا۔ سول سرجن گروگرام ڈاکٹر وریندر یادو کے مطابق خاتون کو کچھ نفسیاتی مسائل ہیں۔ دونوں کو پی جی آئی روہتک ریفر کیا گیا ہے، جہاں انہیں علاج کے لیے نفسیاتی وارڈ میں داخل کرایا گیا ہے۔ یہ معاملہ 17 فروری کو اس وقت سامنے آیا جب منمن کے شوہر سوجن مانجھی نے چاکر پور پولس چوکی میں تعینات اسسٹنٹ سب انسپکٹر پروین کمار سے رابطہ کیا۔ سوجن ایک نجی کمپنی میں انجینئر ہے۔ پولس کے مطابق اپنے بیٹے کے ساتھ تین سال تک خود کو ’قید‘ کرتے ہوئے خاتون نے اپنے شوہر کو جو 2020 کے اوائل میں لاک ڈاؤن کی پابندیوں میں نرمی کے بعد دفتر گئے تھے، کو گھر آنے کی اجازت بھی نہیں دی۔ شوہر سوجن نے ابتدائی چند دن دوستوں اور رشتہ داروں کے ساتھ گزارے اور جب وہ اپنی بیوی کو راضی کرنے میں ناکام رہے تو وہ اسی علاقے میں ایک اور کرائے کے مکان میں رہنے لگی۔ شوہر کے مطابق اس دوران اپنی بیوی اور بیٹے سے رابطے میں رہنے کا واحد ذریعہ ویڈیو کال تھا۔ اس دوران وہ گھر کا کرایہ اور بجلی کا بل ادا کرتا تھا۔ وہ اپنے بیٹے کے اسکول کی فیس جمع کرتا تھا، کیرانہ کے سامان اور سبزی خریدتا تھا اور اپنی بیوی کے گھر کے مرکزی دروازے کے باہر راشن کے تھیلے چھوڑ دیتا تھا۔ 7 سال کی عمر میں خاتون نے بچے کو گھر میں قید کر لیا، اب بچے کی عمر تقریباً 10 سال ہے، تین سال تک بچے کی پڑھائی، کھیل کود اور دوست احباب سب کچھ چھوٹ گیا۔ بچے کی ماں گھر میں اس کے بال کاٹتی تھی۔ 3 سال سے گھر کا کچرا بھی باہر نہیں پھینکا گیا، کچرا، کٹے ہوئے بال اور گندگی اسی کمرے میں جمع ہوتی رہی جہاں بچہ رہتا تھا۔ اہل محلہ کو یہ بھی معلوم نہیں تھا کہ ماں بیٹا گھر میں قید ہیں۔ گھر میں بچہ دیواروں پر پینٹنگز بناتا تھا اور صرف دیواروں پر پنسل رکھ کر پڑھتا تھا۔ اے ایس آئی پروین کمار نے بتایا کہ ’’شروع میں مجھے سوجن کے دعوؤں پر یقین نہیں آیا لیکن جب اس نے مجھے اپنی بیوی اور بیٹے سے ویڈیو کال پر بات کرائی تو میں نے اس معاملے میں مداخلت کی کہ اگر کچھ دن اور گزر جاتے تو کوئی ناخوشگوار واقعہ ہو سکتا تھا۔ اس خاتون کے بیٹے نے پچھلے تین سال سے سورج نہیں دیکھا تھا۔ یہاں تک کہ اس خاتون نے کووڈ کے خوف سے ان تین سالوں میں کھانا پکانے کی گیس اور پانی ذخیرہ نہیں کیا۔ سوجن تین سال بعد اپنی بیوی اور بیٹے کو ملنے پر بہت خوش ہے، اس نے پولس کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ اب ان کا علاج جاری ہے، امید ہے کہ میری زندگی جلد پٹری پر آجائے گی۔

Related posts

لکھیم پور کھیری تشدد: آشیش مشرا کو سپریم کورٹ سے نہیں ملی ضمانت

www.samajnews.in

صحافی صدیق کپن لکھنؤ جیل سے ضمانت پر رہا

www.samajnews.in

نماز عیدین کے احکام وآداب:وصی اللہ مدنی

www.samajnews.in