41.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

ہریانہ میں دو مسلم نوجوانوں کو کار میں زندہ جلایا، پہلا ملزم گرفتار

ہریانہ کو نفرت کی فیکٹری بنایا جا رہا ہے:سرجیوالا، مسلمانوں کو منصوبہ بند طریقے سے نشانہ بنایا جارہا ہے: اسد الدین اویسی

نئی دہلی، سماج نیوز: راجستھان پولس نے جنید اور ناصر قتل کیس کے پہلے ملزم کو گرفتار کر لیا ہے۔ پولس نے رنکو سینی کو گرفتار کر لیا ہے جس کا نام اس معاملے میں درج ایف آئی آر میں درج ہے۔ راجستھان پولس دوسروں کو گرفتار کرنے کے لیے پوچھ گچھ کر رہی ہے۔قابل ذکر ہے کہ ہریانہ کے بھیوانی میں گائے کی اسمگلنگ کے شبہ میں دو مسلم نوجوانوں کو کار میں زندہ جلانے کا معاملہ سامنے آیا ہے اور پولس اس کی جانچ کر رہی ہے۔ جاں بحق ہونے والوں کی شناخت جنید اور ناصر کے نام سے ہوئی ہے۔ یہ دونوں راجستھان کے بھرت پور کے پہاڑی تھانہ علاقے کے رہنے والے بتائے جاتے ہیں۔جنید کے بھائی اسماعیل نے بدھ کو گوپال گڑھ تھانے ( بھرت پور) میں ان کے لاپتہ اور مارپیٹ کی شکایت درج کرائی۔ اس دوران این ڈی ٹی وی نے اسماعیل سے بات کی اور پورے واقعہ کے بارے میں تفصیل سے معلومات حاصل کی۔خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق لوہارو کے ڈی ایس پی جگت سنگھ مورے نے بتایا کہ گاؤں والوں کے ذریعے ڈائل 112 پر اطلاع ملی کہ برواس گاؤں میں ایک جلی ہوئی گاڑی کھڑی ہے۔ جب پولس موقع پر پہنچی تو دیکھا کہ کار کے اندر دو لوگوں کے کنکال موجود ہیں۔ ڈی ایس پی نے بتایا کہ گاڑی کا چیسس نمبر لے لیا گیا ہے۔ جس کی بنیاد پر گاڑی کے مالک کا سراغ لگانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔اسماعیل نے بتایا کہ جنید اور ناصر کو بری طرح پیٹنے کے بعد فیروز پور جھڑکا تھانے لایا گیا۔ لیکن اسے ملزم کے ساتھ تھانے سے بھگا دیا گیا۔ ہمیں اطلاع تک نہیں دی گئی۔ اسماعیل نے بتایا کہ 14 فروری کی صبح 5 بجے کے قریب کزن جنید اور ناصر اپنی بولیرو کار HR 28 E 7763 میں کام سے باہر گئے تھے۔ اس کا فون 15 تاریخ سے بند تھا۔ اس کے بعد گھر والوں نے دونوں کی تلاش شروع کر دی۔ اسماعیل کا مزید کہنا ہے کہ ‘صبح تقریباً 9 بجے ہمیں سابق سرپنچ دینو کا فون آیا۔ سرپنچ نے بتایا کہ انہیں فیروز پور جھڑکا تھانے سے فون آیا تھا کہ دو آدمی کچھ غنڈوں کے ساتھ تھانے میں لائے گئے ہیں۔ معاملہ کیا ہے اس کے بارے میں مکمل معلومات نہیں ہیں۔ اس لیے پولس اسٹیشن جائیں اور کہیں اور دیکھنے سے پہلے معلوم کریں۔ فیروز پور جھرکا ایک شہر ہے جو ہریانہ کے میوات ضلع میں واقع ہے۔ یہ بھرت پور سے تقریباً 16 کلومیٹر دور ہے۔ اسماعیل کے مطابق اس کے بعد تقریباً 4-5 گاڑیاں فیروز پور جھرک کے لیے روانہ ہوئیں۔ ہمیں تھانے کے اندر جانے کی اجازت نہیں تھی۔ بعد میں سابق سرپنچ دینو بھی وہاں پہنچ گئے۔ ان سے درخواست کی گئی کہ تھانے کے اندر جائیں اور معلوم کریں کہ ہمارے آدمی وہاں موجود ہیں یا نہیں۔ سابق سرپنچ اندر گئے اور انہیں معلوم ہوا کہ دونوں نوجوانوں کو وہاں سے اٹھا لیا گیا ہے۔ پولس اسٹیشن سے سابق سرپنچ کو بتایا گیا کہ نوجوانوں کے ساتھ لڑائی ہوئی تھی۔ آپ اپنے تھانے میں اس کی اطلاع دیں۔ یعنی اسماعیل اور اس کے ساتھیوں کو فیروز پور جھرکہ سے واپس بھرت پور جانے اور اپنے تھانے میں گمشدگی کی شکایت درج کرانے کو کہا گیا۔اسماعیل کے مطابق آخر کار تمام لوگ فیروز پور جھڑکا سے بھرت پور واپس آئے اور اپنے تھانے میں رپورٹ درج کرائی۔ اگلی صبح اس کے بھتیجے کا فون آیا کہ بھیوانی کے لوہارو میں ایک گاڑی مکمل طور پر جلی ہوئی حالت میں ملی ہے۔ اندر دو لاشیں بھی پڑی ہیں جو جلی ہوئی ہیں۔ روتے ہوئے اسماعیل کہتے ہیں’ ‘بس اتنا سنا اور یقین ہو گیا کہ یہ دونوں گاڑی میں ہیں‘۔
وہیں کانگریس کے لیڈر رندیپ سرجے والا نے جمعہ کو الزام لگایا کہ ہریانہ کے بھیوانی میں راجستھان کے دو مسلم نوجوانوں کو زندہ جلانے کے معاملے میں ہریانہ کو اب نفرت کی فیکٹری میں تبدیل کیا جا رہا ہے ۔انہوں نے ٹویٹ کیا کہ ہریانہ کو اب ’نفرت کی فیکٹری‘ بنایا جا رہا ہے ۔ بجرنگ دل کے افراد کے ہاتھوں دو بھائیوں کے اغوا اور زندہ جلائے جانے کے دل دہلا دینے والے سانحہ نے ہندوستان کی روح کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا ہے ۔ مونو مانیسر کے خلاف پہلے بھی تشدد کے معاملات درج ہیں۔صاف ہے کہ یہ سب کچھ حکومت کی سرپرستی میں ہو رہا ہے ۔ وہیں اسد الدین اویسی نے کہا کہ بی جے پی اور آر ایس ایس کے نام نہاد گئو رکشکوں کا اس میں ہاتھ ہے اور مسلمانوں کو منصوبہ بند طریقے سے نشانہ بنایا جارہا ہے۔ انہوں نے ٹوئٹ کرکے اس واقعے کی مذمت کی اور انہوں نے سوال کیا کہ کیا وزیر اعظم اور وزیر داخلہ اس پر کچھ بولیں گے ؟ بی جے پی حکومت اس واقعے کی ذمہ دار ہے۔

Related posts

سبھی کیلئےمحبت اور ہمدردی کا جذبہ رکھیں

www.samajnews.in

غیبت کرنے والے کی دعاء بھی قبول نہیں کی جاتی

www.samajnews.in

رپٹن پی یو اور ڈگری انسٹی ٹیوٹ کا مولانا مفتی غلام یزدانی نے کیا دورہ

www.samajnews.in