40.1 C
Delhi
جون 19, 2024
Samaj News

یہ ملک کسی ایک خاندان کی جاگیر نہیں: وزیر اعظم مودی

نئی دہلی: وزیر اعظم نریندر مودی نے گاندھی خاندان کا نام لیے بغیر راجیہ سبھا میں ان پر شدید حملہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ ملک کسی ایک خاندان کی جاگیر نہیں ہے۔ اپوزیشن کے زبردست ہنگامے اور نعرے بازی کے درمیان راجیہ سبھا میں صدر کے خطاب پر شکریہ کی تحریک پر بحث کا جواب دیتے ہوئے مسٹر مودی نے کہا کہ یہ ملک صدیوں پرانا ہے اور لوگوں کی نسلوں کی روایت پر استوار ہے ۔ یہ ملک کسی ایک خاندان کی جاگیر نہیں ہے ۔ انہوں نے سوال کیا کہ ملک کے پہلے وزیر اعظم جواہر لعل نہرو کی نسل سے تعلق رکھنے والے کو نہرو کنیت رکھنے پر کیوں شرم آتی ہے ؟ نہرو کنیت رکھنا کتنی شرم کی بات ہے ۔ یہ اتنی بڑی شخصیت کے خاندان کو قبول نہیں اور وہ ہم سے حساب مانگتے ہیں۔ کانگریس کی طویل حکمرانی کے دوران منتخب حکومتوں کو گرانے کے واقعات کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ آرٹیکل 356کا استعمال کرتے ہوئے ملک میں 90حکومتیں گرائی گئیں۔ اس نے پوچھا کہ یہ کام کرنے والے کون تھے ؟ انہوں نے کہا کہ سابق وزیر اعظم اندرا گاندھی نے اپنے دور میں 50بار اس کا استعمال کیا تھا۔ کیرالہ میں بائیں بازو کی حکومت گرائی گئی۔ اس کے ساتھ ہی ایم جی آر، این ٹی آر اور کروناندھی جیسے تجربہ کار سیاستدانوں کی حکومتیں گرائی گئیں۔ انہوں نے کہا کہ سال 1980میں مہاراشٹر میں نوجوان لیڈر شرد پوار کی حکومت گرائی گئی۔ اسی طرح سال 2005میں نیشنل ڈیموکریٹک الائنس (این ڈی اے ) کو جھارکھنڈ میں اکثریت حاصل تھی لیکن گورنر نے متحدہ ترقی پسند اتحاد کی حکومت بنائی۔ یہ کانگریس کے دور میں ہوا تھا۔قائد حزب اختلاف ملکارجن کھرگے نے لنچ کے وقفے کے بعد دوپہر دو بجے کارروائی شروع ہونے پر ایوان میں نظم و ضبط کا معاملہ اٹھانا چاہا، لیکن چیئرمین جگدیپ دھنکھر نے اس کی اجازت نہیں دی۔ بعد ازاں انہوں نے وزیراعظم کو بیان دینے کے لیے بلایا۔ مسٹر مودی جیسے ہی تقریر کرنے کے لیے کھڑے ہوئے ، عام آدمی پارٹی، ترنمول کانگریس اور کانگریس کے ارکان ایوان کے بیچ میں آگئے اور نعرے لگانے لگے ۔ اس دوران اپوزیشن کے تمام ارکان اپنی نشستوں کے قریب کھڑے ہوگئے ۔ وزیراعظم کی تقریباً 85منٹ کی تقریر کے دوران اپوزیشن جماعتوں کے ارکان کی جانب سے ایوان میں نعرے بازی اور ہنگامہ آرائی جاری رہی۔ اس دوران حکمران جماعت کی جانب سے کئی بار مودی مودی کے نعرے لگائے گئے۔مسٹر مودی کے جواب کے بعد ایوان نے اپوزیشن ارکان کی ترمیم کو مسترد کرتے ہوئے شکریہ کی تحریک کو صوتی ووٹ سے منظور کر لیا۔وزیر اعظم نے ریاستوں کو بلاامتیاز قرض لینے سے خبردار کیا اور کہا کہ کچھ عرصے بعد ان کی معاشی حالت پڑوسی ممالک جیسی ہو جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی معاشی صحت سے مت کھیلو۔ ایسا گناہ نہ کریں جس سے آپ کے بچوں کے حقوق سلب ہوں۔ یہ نہ صرف انہیں تباہ کرے گا بلکہ ملک کو بھی تباہ کر دے گا۔انہوں نے کہا کہ آج ملک میں کچھ لوگ معاشی پالیسیوں سے واقف نہیں ہیں ۔ سیاست کا مفہوم نہ سمجھنے والوں نے معاشیات کو ڈیزاسٹر پالیسی میں بدل دیا۔ انہوں نے ایسے لوگوں کو خبردار کیا کہ وہ اپنی اپنی ریاستوں کو سمجھائیں کہ وہ غلط راستے پر نہ چلیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم اپنے پڑوسی ممالک کی حالت دیکھ رہے ہیں کہ کیا صورتحال ہے ۔ غیر ضروری قرضے لے کر کیسے ملکوں کو ڈبو دیا گیا۔ ہمارے ملک میں بھی اگر فوری فائدے کے لیے ادائیگی کی جائے تو اس کا اثر آنے والی نسلوں پر پڑے گا۔ قرض لینے اور گھی پینے کا کھیل دیکھا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ایک وزیر اعلیٰ نے بیان دیا کہ ‘‘میں فیصلہ کر لوں تو ٹھیک ہے ، اب مجھ پر مصیبت کہاں آئے گی۔ مصیبت 2032کے بعد آئے گی۔ انہوں نے سوال کیا کہ کیا ملک ایسے چلتا ہے ؟ یہ رجحان بنتا جا رہا ہے جو کہ انتہائی تشویشناک ہے ۔ نظم و ضبط کے راستے کا انتخاب کرنا ہوگا۔ تب ہی تمام ریاستیں ترقی کے سفر کا فائدہ اٹھا سکیں گی۔ ملک دیکھ رہا ہے کہ ایک شخص کتنا بھاری پڑ رہا ہے ۔ سیاسی کھیل کھیلنے والے یہ لوگ فرار کا راستہ تلاش کر رہے ہیں۔ ملک ایک لمبی چھلانگ لگانے کو تیار ہے ۔صدر جمہوریہ کے خطاب کو ہندوستان کا بلیو پرنٹ اور ترقی کے روڈ میپ کی رہنمائی بتاتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ یہ ایوان ریاستوں کا ایوان ہے ۔ گزشتہ دہائیوں میں اس ایوان سے کئی دانشوروں نے ملک کو سمت دی ہے ۔ رہنمائی کی ہے ۔ اس ایوان میں جو کچھ ہوتا ہے، ملک اسے سنتا اور سنجیدگی سے لیتا ہے۔ اپوزیشن ارکان کے ہنگامہ آرائی اور نعرے بازی کے درمیان انہوں نے کہا کہ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ کچھ لوگوں کے الفاظ نہ صرف ایوان بلکہ ملک کو بھی مایوس کررہے ہیں۔ انہوں نے اپوزیشن ارکان پر کہا کہ ‘مٹی ان کے ساتھ تھی، گوگل میرے ساتھ تھا، جو بھی ان کے ساتھ تھا، انہوں نے اسے اچھال دیا’۔ انہوں نے کہا کہ یہ اچھی بات ہے کہ جتنی کیچڑ پھینکی جائے گی کمل اتنا ہی کھلے گا۔ آپ کمل کو کھلانے میں بالواسطہ اور براہ راست حصہ ڈالتے ہیں۔مسٹر کھڑگے کے کل دیئے گئے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کانگریس 60سال میں مضبوط بنیاد بنا رہی ہے لیکن مودی اس کا کریڈٹ لے رہے ہیں۔ 2014میں جب حکومت بنی تو ہمیں معلوم ہوا کہ 60سالوں میں کانگریس خاندان نے صرف گڑھے ہی بنائے ہیں۔ جس وقت وہ گڑھے کھود رہے تھے ، اس وقت دنیا کے چھوٹے چھوٹے ممالک بھی کامیابی کی بلندیوں کو چھو رہے تھے ۔ آگے بڑھ رہے تھے۔ کانگریس کی دنیا پنچایت سے پارلیمنٹ تک چلتی تھی۔ سب آنکھیں بند کرکے سہارا لیتے تھے ۔ انہوں نے ایسا ورک کلچر تیار کیا کہ ملک کے مسائل کے مستقل حل کے بارے میں نہیں سوچا۔ مسائل کو حل کرنا اس کی ذمہ داری تھی۔ ملک کے عوام دیکھ رہے ہیں۔ مسئلہ کا حل کتنا فائدہ مند ہے ؟مسٹر مودی نے کہا، ‘‘ہماری شناخت کوشش کی وجہ سے ہوئی ہے۔ مستقل حل کی طرف بڑھتے رہیں۔ بھاگنے والا نہیں۔ مستقل حل پر زور دیتے ہوئے آگے بڑھ رہے ہیں۔ اپنی مختلف اسکیموں کی کامیابیوں کا ذکر کرتے ہوئے مسٹر مودی نے کہا کہ سال 2047تک ملک کو ترقی یافتہ ملک بنانا ہے ۔

Related posts

مملکت سعودی عرب کی شاندار روایت

www.samajnews.in

پاٹیداروں سے نفرت کرتی ہے بی جے پی

www.samajnews.in

مبینہ شیولنگ کی کاربن ڈیٹنگ نہیں ہوگی

www.samajnews.in