41.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

سپریم کورٹ نے دلایا ہلدوانی کے لوگوں کو انصاف:عمران پرتاپ گڑھی

ریلوے کے تباہ کن فرمان کے خلاف کانگریس نے لڑی ہے انصاف کی لڑائی:ممبر پارلیمنٹ

نئی دہلی،سماج نیوز: سپریم کورٹ نے ہلدوانی کے لوگوں کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کی کوشش کے خلاف ایک شاندار اور جرأتمندانہ فیصلہ سنا کر جمہوریت اور آئین کی عزت کو بچایا ہے۔ کانگریس کی اتراکھنڈ یونٹ اور مرکزی کانگریس کی مشترکہ کوششوں سے ہلدوانی کے لوگوں کو انصاف ملا۔ کانگریس اقلیتی ڈپارٹمنٹ کے صدر اور راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ عمران پرتاپ گڑھی نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے مذکورہ خیالات کا اظہار کیا۔ 24 اکبر روڈ پر واقع کانگریس کے مرکزی دفتر میں عمران پرتاپ گڑھی نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ کانگریس کے اقلیتی شعبہ سمیت پوری کانگریس نفرت، ناانصافی اور ظلم کے خلاف کھڑی ہے۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے عمران نے کہا کہ ملک میں جہاں کہیں بھی ریاستی یا مرکزی حکومت اقلیتوں، دلتوں، مظلوموں، قبائلیوں اور غریبوں کے خلاف کارروائی کرے گی کانگریس اس کی مخالفت کرے گی۔ ملک میں نفرت پھیلانے والوں کے خلاف ہی ہمارے رہنما راہل گاندھی ملک گیر تحریک یعنی ’بھارت جوڑو یاترا‘ چلارہے ہیں۔ اس شدید سردی میں سڑکوں پر پیدل چل کر وہ ملک کے عوام میں نفرت کی دکانیں بند کرانے اورمحبت کی دکانیں کھولنے کا پیغام لے کر گھوم رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر غیر کانگریسی حکومتیں یا انتظامیہ ملک میں کسی بھی جگہ عوام پر ظلم کرنے کی کوشش کرے گی، ان کے سروں سے چھت، اسکول، کمیونٹی ہال، اسپتال، مندر، مسجد، چرچ وغیرہ چھیننے کی کوشش کرے گی تو پھر پوری کانگریس متحد ہو کر اسے روکے گی۔ اس کے لیے اگر وہ انصاف کے آخری دروازے تک بھی جانا پڑا تو کانگریس اس کے لیے تیار ہے۔ ہلدوانی میں جب ریلوے نے وہاں کے لوگوں کو تباہ کرنے کا حکم دیا تو مقامی ایم ایل اے ’سمت ہردیش‘ سب سے پہلے ایک سپاہی کے طور پر سامنے آئے۔ ریلوے نے نہ صرف 4365 مکانات کو تباہ کرنے کا فرمان جاری کیا تھا بلکہ ریاست کے سرکاری اسپتالوں، 11 تسلیم شدہ اسکولوں، کئی سرکاری اسکولوں، کمیونٹی سینٹروں کو بھی تباہ کرناچاہا تھا۔ ایک چرچ، ایک انگریزوں کے دور کا مندر اور دیگر کئی تاریخی مقامات بھی تھے جن کو ریلوے تباہ کرنا چاہتا تھا۔ ریلوے نے پہلے دعویٰ کیا کہ اس کی 29 ایکڑ اراضی پر تجاوزات ہیں، پھر ربڑ کی طرح اپنا پینترا بدل کر کہا کہ 78 ایکڑ اراضی پر تجاوزات کیا گیا ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ ریاستی حکومت نے ریلوے کے خلاف اور تباہ ہونے والوں کے خلاف ایک لفظ بھی نہیں کہا، جبکہ ریاستی حکومت کے کئی اسکول اور کئی سرکاری عمارتیں بھی اسی زمین پر قائم ہیں۔ عمران پرتاپ گڑھی نے کہا کہ اب تک اتراکھنڈ کی بی جے پی حکومت کا رویہ اس معاملے میں بہت برا رہا ہے، لیکن اگر وہ وزیر اعظم نریندر مودی کے ’’سب کا اپنا پکا مکان‘‘ کے وعدے کو پورا کرتی ہے تو وہ عوام کے ساتھ کھڑی ہوگی۔ کانگریس ممبر پارلیمنٹعمران پرتاپ گڑھی نے اس معاملے میں ٹویٹ کیا’’ یہ انصاف کی جیت ہے، انسانیت کی جیت ہے۔ ہلدوانی کے لوگوں سے چھت نہیں چھینی جائے گی، بچوں کے اسکول نہیں ٹوٹیں گے، اسپتال نہیں ٹوٹیں گے، مندر نہیں ٹوٹیں گے۔ مسجد اور دھرم شالہ کو نہیں توڑا جائے گا۔ شکریہ سپریم کورٹ‘‘۔ بعد ازاں انہوں نے کہا کہ اسماعیلیوں میں ریاستی حکومت کا رویہ انتہائی خراب رہا ہے اور حیرت کی بات ہے کہ کوئی بھی ریاستی حکومت اپنے لوگوں کے خلاف کیسے ہو سکتی ہے، وہاں نہ صرف چار ہزار سے زائد گھر ہیں بلکہ سرکاری اسکول، سرکاری اسپتال بھی ہیں۔ ایک کمیونٹی بلڈنگ ہے، ایک انگریز دور کا مندر ہے، ایک مسجد ہے، ایک دھرم شالہ ہے۔

عمران پرتاپ گڑھی نے سوال کیا کہ آپ بغیر کسی منصوبہ بندی کے سب کچھ کیسے تباہ کر سکتے ہیں؟ وزیر اعظم نریندر مودی سب کو پکے مکان دینے کا وعدہ کرتے ہیں اور اتراکھنڈ میں ان کی حکومت ہے، اس لیے ریاستی حکومت کو وزیر اعظم نریندر مودی کے وعدے کو سچ ثابت کرنے کے لیے ہلدوانی کے لوگوں کے ساتھ کھڑا ہونا پڑے گا، حالانکہ مجھے اس کی امید نہیں ہے۔ بتادیں کہ سپریم کورٹ نے ہلدوانی میں 29 ایکڑ زمین سے تجاوزات ہٹانے کے لیے اتراکھنڈ ہائی کورٹ کی ہدایات پر روک لگا دی ہے۔ آج سپریم کورٹ میں عمران پرتاپ گڑھی کے ساتھ سینئر ایڈوکیٹ سلمان خورشید، قائد حزب اختلاف یشپال آریہ، ہلدوانی کے ایم ایل اے سمیت ہردیش، مہاراشٹر اقلیتی ڈپارٹمنٹ کے انچارج احمد خان، اے آئی سی سی میڈیا انچارج اقلیتی شعبہ عدنان اشرف، لیگل ڈپارٹمنٹ کے انچارج ایڈوکیٹ شمس رین موجود تھے۔ عمران نے کہا کہ کانگریس نے ریلوے کی ناانصافی کیخلاف جنگ لڑی اور اس میں انصاف کی جیت ہوئی، جس کے لیے سپریم کورٹ اور ہلدوانی واسیوں کو تہہ دل سے مبارکباد پیش کرتے ہیں۔ کانگریس کے سینئر لیڈر اور سپریم کورٹ کے وکیل مسٹر سلمان خورشید نے ریلوے کے جابرانہ احکامات کے خلاف اہم رول ادا کیا۔ ہمارے کئی بڑے لیڈر، مقامی ایم ایل اے اور کانگریس کے اقلیتی محکمہ ہلدوانی کے متاثرین کے ساتھ کھڑے رہے۔ عمران نے کہا کہ انصاف کی لڑائی جاری رہے گی اور اگر نہ صرف آسام، مدھیہ پردیش بلکہ ملک کے کسی بھی حصے میں غریبوں پر ظلم ہوا تو کانگریس دیوار بن کر کھڑی ہوگی۔ جمہوریت اور آئین کے وقار کو کسی صورت میں مٹنے نہیں دیا جائے گا۔ ایک سوال کے جواب میں عمران نے کہا کہ ہندوؤں اور مسلمانوں کے درمیان نفرت پیدا کرنے والے ملک کو بجلی اور غریبوں کو روزگار نہیں دے سکتے، کانگریس نفرت کی سیاست کرنے والوں کے خلاف ہے۔ یہ ہندو مسلم، سکھ، بدھ جین پارسی سمیت ملک میں رہنے والے ہر فرد کے مفادات کا محافظ ہے۔ جس طرح کانگریس نے ہلدوانی کے لوگوں کو چھت ٹوٹنے سے بچایا ہے، اسی طرح وہ جین برادری کے لیے لڑے گی، چاہے اسے سپریم کورٹ تک جانا پڑے، کانگریس ہی کرے گی۔

Related posts

پیر نبی اور درویشوں کی بارگاہ سے بلا تفریق ہر کوئی مستفید ہوتا ہے: وزیر عمران حسین

www.samajnews.in

آخری پانچ گیند پر6، 6، 6، 6، 6 رن اور میچ ختم

www.samajnews.in

دودھ پینے کا صحیح وقت کیا ہے؟

www.samajnews.in