42.1 C
Delhi
مئی 19, 2024
Samaj News

شیوسینا کا انتخابی نشان منجمد

نئی دہلی: مہاراشٹر میں شیوسینا کے ایکناتھ شنڈے اور ادھو ٹھاکرے کی قیادت والے دھڑے کے درمیان پارٹی کے نام اور تیر کمان کے نشان کے حق کو لے کر چل رہی قانونی جنگ کے درمیان الیکشن کمیشن نے دونوں کو زور دار جھٹکا دیا ہے اور دونوں دھڑوں کے شیو سینا کا نام اور پارٹی کا نشان استعمال کرنے سے براہ راست پابندی عائد کر دی۔چیف الیکشن کمشنر راجیو کمار اور الیکشن کمشنر انوپ چندر پانڈے نے اپنے احکامات میں اس تنازعہ پر حتمی فیصلہ ہونے تک شیوسینا کے نام اور اس کے انتخابی نشان تیر کمان کے استعمال پر پابندی لگا دی ہے۔کمیشن نے عبوری حکم میں مشاہدہ کیا ہے کہ نہ تو ایکناتھ سمبھاجی شنڈے نہ ہی درخواست گزار کی قیادت والا گروپ اور نہ ہی مدعا ادھو ٹھاکرے کی قیادت والا گروپ براہ راست شیو سینا کا نام استعمال کر سکتا ہے۔ کمیشن نے یہ بھی کہا ہے کہ ان میں سے کسی بھی فریق کو شیو سینا کے لیے مختص تیر کا نشان استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی اور دونوں دھڑے اپنی پسند کے کسی اور نام لے سکتے ہیں اور اگر وہ چاہیں تو اپنی پارٹی شیو سینا کا انتخابی نشان سے جڑا کوئی بھی نام رکھ لیں۔کمیشن نے کہا ہے کہ دونوں فریقوں کو مختلف آزاد انتخابی نشانوں میں سے کوئی بھی مختلف انتخابی نشان الاٹ کیا جا سکتا ہے۔ کمیشن نے انہیں ہدایت دی ہے کہ وہ پیر کی دوپہر ایک بجے تک اپنے لیے ترجیحی ترتیب میں تین مختلف نام اور تین آزاد انتخابی نشانات پیش کریں۔کاندیولی (مشرقی) اسمبلی سیٹ کے ضمنی انتخاب کے لیے نامزدگی کا عمل 7 اکتوبر سے شروع ہو گیا ہے اور پرچہ نامزدگی داخل کرنے کی آخری تاریخ 14 نومبر ہے۔ پارٹی میں پھوٹ کے بعد پارٹی کے نام اور نشان کو لے کر کمیشن کے ساتھ ساتھ سپریم کورٹ کی سطح پر بھی لڑائی جاری ہے۔

Related posts

فلاح انسانیت ٹرسٹ اٹوا کے بینر تلے موضع پرسیا میں دینی پروگرام کا انعقاد

www.samajnews.in

سعودی عرب امن کا ثالث تھا اور اب بھی ہے: شاہ سلمان

www.samajnews.in

بد بخت بیٹے نے ماں کو ذبح کرڈالا

www.samajnews.in