33.1 C
Delhi
جولائی 24, 2024
Samaj News

فرضی خبروں کی شکار بن چکی حقیقت، لوگوں میں صبر و تحمل کا فقدان: چیف جسٹس

نئی دہلی: چیف جسٹس آف انڈیا (سی جے آئی) ڈی وائی چندرچوڑ نے کہا ہے کہ فرضی خبروں کے دور میں حقیقت ‘شکار بن گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا کے پھیلاؤ سے ایک چھوٹی سی بات بھی منطق کی کسوٹی پر پرکھے بغیر ایک جامع اصول کی شکل اختیار کر سکتی ہے۔سی جے آئی نے کہا کہ آج ہم ایک ایسے دور میں رہ رہے ہیں جہاں لوگوں میں صبر و تحمل اور قوت برداشت نہیں ہے، کیونکہ وہ اپنے سے مختلف نقطہ نظر کو قبول کرنے کو تیار نہیں ہیں۔ جسٹس چندرچوڑ امریکن بار ایسوسی ایشن انڈیا کانفرنس 2023 سے خطاب کر رہے تھے، جس کا موضوع ’عالمگیریت کے دور میں قانون: ہندوستان اور مغرب کا ملن‘ تھا۔سی جے آئی نے مختلف مسائل پر بات کی، جس میں ٹیکنالوجی اور عدلیہ میں اس کا استعمال (بالخصوص کورونا بحران کے دوران)، عدالتی پیشے کو درپیش چیلنجز اور مزید خواتین ججوں کی تقرری شامل تھے۔ جسٹس چندرچوڑ نے کہا کہ کئی طریقوں سے ہندوستانی آئین عالمگیریت کے دور میں داخل ہونے سے قبل عالمگیریت کی ایک بہترین مثال ہے۔انہوں نے کہا کہ جب ہندوستانی آئین تیار کیا گیا تو اس کے معماروں کو شاید اندازہ نہیں تھا کہ انسانیت کس سمت میں ترقی کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس پرائیویسی کا تصور نہیں تھا، انٹرنیٹ نہیں تھا۔ ہم ایسی دنیا میں نہیں رہتے تھے جسے الگوریتم کے ذریعے کنٹرول کیا جا سکے، ہمارے پاس کوئی سوشل میڈیا نہیں تھا۔سی جے آئی نے کہا کہ ہر چھوٹی بات کے لئے جو ہم کرتے ہیں، ہر وہ کام جو آپ کرتے ہیں، آپ کو کسی ایسے شخص کے ذریعہ ٹرول کئے جانے کا خطرہ ہے جو آپ سے متفق نہیں ہے اور یقین کریں ہم بطور جج بھی اس سے مستثنیٰ نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جس طرح ٹریول اور ٹیکنالوجی کی عالمی آمد سے انسانیت پھیلی ہے اسی طرح انسانیت بھی کچھ بھی قبول نہ کرنے کی خواہش کے ساتھ پیچھے ہٹ گئی ہے، جس میں لوگ ذاتی طور پر یقین رکھتے ہیں۔ اور مجھے یقین ہے کہ یہ ہمارے دور کا چیلنج ہے۔انہوں نے ٹیکنالوجی کے مثبت پہلوؤں پر بھی روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اس میں سے کچھ ٹیکنالوجی کی پیداوار ہو سکتی ہے۔ جسٹس چندرچوڑ نے کہا کہ عالمگیریت نے خود اپنی بے اطمینانی کو جنم دیا ہے اور اس کی بہت سی وجوہات ہیں۔ کساد بازاری بھی ایک وجہ ہے، جس کا تجربہ پوری دنیا میں ہوتا رہا ہے۔ سی جے آئی نے کہا کہ ان سے اکثر پوچھا جاتا ہے کہ ملک میں زیادہ خواتین جج کیوں نہیں ہو سکتیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ شمولیت اور تنوع کے لحاظ سے آج ہمارے ادارے کی حالت دو دہائی قبل پیشے کی حالت کی آئینہ دار ہے۔ کیونکہ جو جج آج 2023 میں ہائی کورٹس میں آتے ہیں یا جو جج 2023 میں سپریم کورٹ میں آتے ہیں وہ صدی کے آغاز میں بار کی حالت کی عکاسی کرتے ہیں۔جسٹس چندرچوڑ نے کہا کہ چونکہ 2000 اور 2023 کے درمیان خواتین کے قانونی پیشے میں داخل ہونے اور پھلنے پھولنے کے لئے برابری کا میدان نہیں ہے، اس لئے کوئی جادو کی چھڑی نہیں ہے جس سے آپ 2023 میں سپریم کورٹ میں خواتین کا ججوں کے طور پر انتخاب کر سکیں۔

Related posts

گجرات کو ڈبل انجن نہیں، نئے انجن والی حکومت کی ضرورت :اروند کجریوال

www.samajnews.in

دہلی فسادات میں باپ بیٹے نے جلادی تھی پڑوسی کی دکان، عدالت نے ٹھہرایا قصوروار

www.samajnews.in

مسلمانوں کیلئے جماعت اسلامی ہند نے اہم خدمات انجام دیں

www.samajnews.in