33.1 C
Delhi
جولائی 24, 2024
Samaj News

بابری مسجد کیخلاف فیصلہ سنانے والے جسٹس عبدالنذیر پر مودی سرکار مہربان

نئی دہلی، سماج نیوز: صدر جمہوریہ دروپدی مرمو نے سپریم کورٹ کے ریٹائرڈ جج جسٹس ایس عبدالنذیر کی آندھرا پردیش کے گورنر کے طور پر تقرری کی اطلاع دی۔ جسٹس سید عبدالنذیر سپریم کورٹ کے سابق جج ہیں اور اسی سال 4 جنوری کو ریٹائر ہوئے۔ جسٹس نذیر بسوا بھوشن ہری چندن کی جگہ لیں گے جنہیں چھتیس گڑھ کا گورنر بنایا گیا ہے۔ جسٹس عبدالنذیر سپریم کورٹ کے کئی تاریخی فیصلوں کا حصہ رہے ہیں۔ وہ سیاسی طور پر حساس ایودھیا اراضی تنازعہ، ‘تین طلاق اور ‘رازداری کے حق کو بنیادی حق قرار دینے والے کئی بڑے فیصلوں کا حصہ تھے۔ جسٹس نذیر جنہیں 17 فروری 2017 کو سپریم کورٹ کے جج کے طور پر ترقی دی گئی تھی، وہ کئی آئینی بنچوں کا حصہ رہے ہیں جنہوں نے 2016 میں 1000 اور 500 روپے کے نوٹوں کو ختم کرنے سے لے کر مراٹھاوں کو سرکاری ملازمتوں اور داخلوں میں ریزرویشن تک کا فیصلہ دیا تھا۔ اعلیٰ سرکاری افسران کے آزادی اظہار اور اظہار رائے کے بنیادی حق تک کے بہت سے مقدمات کے فیصلے۔وہ پانچ ججوں کی آئینی بنچ کا حصہ تھے جس نے نومبر 2019 میں ایودھیا میں متنازعہ مقام پر رام مندر کی تعمیر کا راستہ صاف کیا تھا اور مرکز کو ہدایت کی تھی کہ وہ سنی وقف بورڈ کو مسجد کے لیے پانچ ایکڑ کا پلاٹ الاٹ کرے۔ اپنی الوداعی تقریب میں جسٹس عبدالنذیر نے کہا تھا کہ عدلیہ میں خواتین کی نمائندگی اب بھی بہت کم ہے۔اپنی الوداعی تقریب میں سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر وکاس سنگھ نے یاد کیا کہ جسٹس عبدالنذیر ایودھیا اراضی تنازعہ کیس کا حصہ تھے۔انہوں نے کہا تھا کہ جسٹس عبدالنذیر آئینی بنچ کے واحد مسلم جج تھے جنہوں نے متنازعہ ایودھیا اراضی تنازعہ کیس کی سماعت کی اور متفقہ فیصلہ سنایا۔ انہوں نے کہا تھا، یہ جسٹس عبدالنذیر کی سیکولرازم کے تئیں وابستگی اور عدالتی ادارے کی خدمت کرنے کی خواہش کی عکاسی کرتا ہے۔جسٹس عبدالنذیر نے جواب دیا کہ سپریم کورٹ نے ہمیشہ بہترین کارکردگی کی کوشش کی ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ موجودہ چیف جسٹس آف انڈیا ڈی وائی چندرچوڑ کی رہنمائی میں سپریم کورٹ اس متحرک معاشرے کے چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہے۔

Related posts

’’میرا نام ساورکر نہیں.. گاندھی کبھی معافی نہیں مانگتے‘‘: راہل گاندھی

www.samajnews.in

ہندوستانی معیشت خطرناک طور پر ’ہندو ترقی کی شرح‘ کے قریب، صورتحال تشویشناک: رگھورام راجن

www.samajnews.in

دارالعلوم دیوبند غیر تسلیم شدہ مدرسہ

www.samajnews.in