45.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

دوحہ:رنگا رنگ تقریب میں فٹ بال ورلڈ کپ کا آغاز

دوحہ: قطر کے دارالحکومت دوحہ کے البیت اسٹیڈیم میں ایک رنگارنگ تقریب میں فٹ بال عالمی کپ ٹورنا منٹ کا آغاز ہوگیا ہے۔امیرقطر شیخ تمیم بن حمد آل ثانی نے فیفاعالمی کپ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس ایونٹ نےتمام قومیتوں اور عقائد کے لوگوں کو جمع کردیا ہے۔انہوں نے خیمے کی شکل کے البیت اسٹیڈیم میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’قطر سے، عرب دنیا سے، میں ورلڈکپ 2022 میں سب کو خوش آمدید کہتا ہوں۔یہ کتنا پیارا سماں ہے کہ لوگ اپنے تنوع کا جشن منانے کے لیے انہیں تقسیم کرنے والی چیزوں کو ایک طرف رکھ سکتے ہیں اورفٹ بال کا ٹورنامنٹ ان سب کو ایک ساتھ لاتا ہے‘‘۔میزبان قطراور ایکواڈور کے درمیان پہلے میچ سے قبل اسٹیڈیم میں ہونے والی افتتاحی تقریب میں سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمدبن سلمان اور مصر، ترکی اورالجزائرکے صدورکے ساتھ ساتھ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیوگوتیریس بھی موجود تھے۔

قطر نے فیفا ورلڈ کپ 2022 کی میزبانی کر کے یہ ثابت کر دیا ہے کہ ‘جہاں مرضی ہے وہاں راستہ ہے‘۔ اس نے الزامات کی تمام رکاوٹوں کو پیچھے چھوڑ دیا اور سب سے مہنگا اور بہترین فیفا ورلڈ کپ کا انعقاد کیا

عرب روایت اور جدید ٹیکنالوجی کا مرکب ہے فیفا ورلڈ کپ


سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان، فیفا کے صدر گیانی انفنٹینو اور قطر کے امیر تمیم بن حمد الثانی کی موجودگی میں جنوبی کوریا کے گلوکار جیون جنگ کوک نے اپنی پرفارمنس سے ہجوم کو جھنجھوڑ دیا۔ فیفا ورلڈ کپ 2022 کی افتتاحی تقریب کا مشاہدہ کرنے کے لیے فٹ بال کے شائقین قطر کے البیت اسٹیڈیم میں جمع تھے۔ وہاں زبردست آتش بازی کی گئی اور روشنی کو انتہائی جدید انداز میں پیش کیا گیا۔قطر نے فیفا ورلڈ کپ 2022 کی میزبانی کر کے یہ ثابت کر دیا ہے کہ ‘جہاں مرضی ہے وہاں راستہ ہے‘۔ اس نے الزامات کی تمام رکاوٹوں کو پیچھے چھوڑ دیا اور سب سے مہنگا اور بہترین فیفا ورلڈ کپ کا انعقاد کیا۔ ایسے مواقع بھی آئے جب عرب ملک میں ورلڈ کپ کی میزبانی کرنا تاریک نظر آتا تھا لیکن قطر نے بہت ٹھنڈے طریقے سے سب کچھ سنبھال لیا۔


جب قطر فٹ بال ایسوسی ایشن کے سابق صدر اور ایشین فٹ بال کنفیڈریشن کے سابق صدر محمد بن حمام پر فیفا ایگزیکٹو ممبران کو رشوت دینے کے الزام میں پابندی لگائی گئی تو ایسا لگ رہا تھا کہ ورلڈ کپ عرب ملک میں نہیں منعقد ہو پائے گا، لیکن قطر کے حکام نے کبھی عالمی کپ کے انعقاد کے مشن پر پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔کورونا وبائی مرض قطری حکومت کے لیے پریشانی کا باعث تھا لیکن خوش قسمتی سے وبائی مرض اتنی جانیں لینے کے بعد اپنی موت خود مر گیا جو قطری حکام کے لیے ایک راحت کی بات ثابت ہوئی۔ اگرچہ مزدوروں سے لے کر خواتین کے حقوق، ایل جی بی ٹی اور شراب نوشی تک کئی مسائل تھے لیکن قطر نے کوئی جواب دیئے بغیر عالمی کپ کو یادگار بنانے پر توجہ دی۔
قطر، جس نے کبھی عالمی کپ کے لیے کوالیفائی نہیں کیا یا 2019 تک ایشین کپ کے کوارٹر فائنل مرحلے کی رکاوٹ کو بھی عبور نہیں کیا، نے 2019 کے ایشین کپ میں شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا جہاں اس نے طاقتور سعودی عرب، جاپان، عراق اور جمہوریہ کوریا کو شکست دے کر کامیابی حاصل کی۔دنیا بھر سے لوگ فٹ بال کے سنسنی خیز کھیل کو دیکھنے اور عرب کی مہمان نوازی سے لطف اندوز ہونے کے لیے قطر پہنچ چکے ہیں یا پہنچ رہے ہیں۔ اس حقیقت کے باوجود کہ صرف 32 ممالک ہی عالمی کپ میں حصہ لیتے ہیں، فٹ بال کا بخار پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لئے ہوئے ہے۔

Related posts

دہلی-این سی آر میں تیزی کیساتھ پھیل رہا ڈینگو، غازی آباد میں 21 سالہ لڑکے کی موت

www.samajnews.in

دنیا کو چین کی ضرورت

www.samajnews.in

بجٹ میں متوسط طبقے کو راحت دینے کی کوشش

www.samajnews.in