33.1 C
Delhi
جولائی 24, 2024
Samaj News

پاکستان میں کشتی ڈوبنے سے 50طلباء جاں بحق

اسلام آباد: شمال مغربی پاکستان میں ان کی اوور لوڈ کشتی الٹنے سے 50بچے ہلاک ہوگئے۔ پولس نے نے بتایا کہ غوطہ خوروں نے تین دن تک منجمد پانی سے لاشیں کھینچنے میں گزارے۔ 7سے 14 سال کی عمر کے تمام لڑکے ایک مدرسے کے طالب علم تھے اور انہیں اتوار کے روز خوبصورت ٹانڈہ ڈیم جھیل پر ایک دن کی سیر کے لیے لے جایا گیا تھا۔ سرد موسم کی وجہ سے ڈیم کا پانی جم گیا تھا جس کی وجہ سے تلاشی مشن میں رکاوٹ پیدا ہو رہی تھی لیکن غوطہ خور بقیہ لاشوں کو نکالنے کے لیے گہرا غوطہ لگانے میں کامیاب ہوگئے۔ ریسکیو 1122 کے ایک سینئر اہلکار خطیر احمد نے کہا۔انہوں نے مزید کہا کہ ایک استاد اور ایک کپتان کی لاشیں بھی پانی سے نکالی گئیں، جس سے مرنے والوں کی تعداد 51 ہوگئی۔ محمد عمر جو مشہور ویک اینڈ سیاحتی مقام کا نظارہ کرتے ہوئے ایک پکنک سائٹ پر چائے بیچتے ہیں، نے بتایا کہ گزشتہ چند دنوں میں درجنوں والدین اور رشتہ دار جمع ہوئے تھے۔ انہوں نے منگل کے روز اے ایف پی کو فون پر بتایا کہ ’’جب بھی جائے وقوعہ سے کوئی لاش برآمد ہوتی تو وہ غوطہ پر چھلانگ لگا کر دیکھتے کہ آیا یہ ان کا بیٹا ہے اور جب بھی ہم انہیں درد اور کرب میں چیختے ہوئے سنتے‘۔ انہوں نے منگل کو اے ایف پی کو فون پر بتایا’میں نے اپنی زندگی میں ایسے مناظر نہیں دیکھے، یہ ایک ایسی چیز ہے جسے الفاظ میں بیان نہیں کیا جاسکتا‘۔ ٹانڈہ ڈیم جھیل مدرسے سے تقریباً پانچ کلومیٹر (3 میل) دور ہے۔ ایک اسلامی اسکول جو مفت مذہبی تعلیم فراہم کرتا ہے۔ صوبہ خیبر پختونخوا کے کوہاٹ میں ہے۔ پولس کے ترجمان فضل نعیم نے منگل کو ریسکیو مشن کے اختتام کے بعد ہلاکتوں کی نئی تعداد جاری کی۔ فوج کے میڈیا ونگ نے اس کی تصدیق کی ہے۔ کشتی اوور لوڈ تھی۔ اس کی گنجائش تقریباً 20 سے 25 افراد کی تھی۔ نعیم نے اے ایف پی کو بتایا۔ پاکستان کی فوج نے ایسی تصاویر شیئر کی ہیں جن میں غوطہ خور ربڑ کی ڈنگیوں میں جھیل سے گزرتے ہوئے، بچوں کی لاشیں نکالنے کے لیے سبز پانیوں میں داخل ہوتے ہوئے دکھائی دے رہے ہیں۔ 11 سالہ زندہ بچ جانے والے محمد مصطفیٰ نے اتوار کو اپنے اسپتال کے بستر سے اے ایف پی کو بتایا’میں کشتی کے نیچے پھنس گیا۔”میری شال اور سویٹر نے میرا وزن کم کر دیا، اس لیے میں نے انہیں اتار دیا‘۔ پانی بہت ٹھنڈا تھا اور میرا جسم بے حس ہو گیا تھا۔ میں نے سوچا کہ میں اس وقت ختم ہو جاؤں گا جب ایک انفلٹیبل ٹیوب پر ایک آدمی نے مجھے بچایا۔ پاکستان میں ڈوبنے کے واقعات عام ہیں، جب بوڑھے اور زیادہ بوجھ والے جہاز اپنا استحکام کھو دیتے ہیں اور مسافروں کو پانی میں ڈال دیتے ہیں۔ اسی دن جنوب مغربی صوبہ بلوچستان میں ان کی بس کے کھائی میں گرنے سے کم از کم 41 افراد کی ہلاکت کی تصدیق کی گئی۔ گزشتہ سال جولائی میں دو گاؤں کے درمیان شادی کے جلوس کے دوران ایک ہی خاندان کے تقریباً 100 افراد کو لے جانے والی اوور لوڈ کشتی الٹنے سے کم از کم 18 خواتین ڈوب گئیں۔

Related posts

نئی دہلی عالمی کتاب میلہ:ہندوستان اور سعودی عرب کے مابین ثقافتی تعلقات کی ایک نئی عبارت لکھے گا

www.samajnews.in

آہ! فلسطین

www.samajnews.in

مرنے کے بعد ملا انصاف، متاثرہ شخص کیخلاف 18 سال تک فرضی طریقے سے چلایا گیا مقدمہ

www.samajnews.in