42.1 C
Delhi
مئی 19, 2024
Samaj News

عام بجٹ 24-2023کی جھلکیاں

نئی دہلی: سماج نیوز:تقریباً 9برسوں میں فی کس آمدنی دوگنی ہو کر 1.97لاکھ روپے ہو گئی ہے ۔ہندوستانی معیشت نے سائز میں اضافہ کیا ہے اور پچھلے نو سالوں میں دنیا کی 10ویں بڑی سے پانچویں بڑی ہو گئی ہے ۔ایمپلائز پراویڈنٹ فنڈ آرگنائزیشن نے اپنی ممبر شپ کو دوگنا سے بڑھا کر 27 کروڑ کر دیا ہے ۔سال 2022 میں یو پی آئی کے ذریعے 126 لاکھ کروڑ روپے کی 7,400 کروڑ ڈیجیٹل ادائیگیاں کی گئی ہیں۔سوچھ بھارت مشن کے تحت 11.7 کروڑ گھروں میں بیت الخلاء بنائے گئے ہیں۔اجولا یوجنا کے تحت 9.6 کروڑ ایل پی جی کنکشن دیے گئے ۔102کروڑ لوگوں کو نشانہ بناکر کووڈ ویکسینیشن کا اعداد و شمار 220 کروڑ سے تجاوز کر گیا۔47.8کروڑ پردھان منتری جن دھن بینک اکاؤنٹس کھولے گئے ۔پی ایم سرکشا بیما یوجنا اور پی ایم جیون جیوتی یوجنا کے تحت 44.6 کروڑ لوگوں کو انشورنس کوریج۔پی ایم سمان کسان فنڈ کے تحت 11.4 کروڑ کسانوں کو 2.2 لاکھ کروڑ روپے کی نقد منتقلی۔بجٹ کی سات ترجیحات ‘سپترشی’ جن میں جامع ترقی، آخری فرد تک آخری میل تک رسائی، بنیادی ڈھانچہ اور سرمایہ کاری، موروثی صلاحیتوں کی توسیع، سبز ترقی، نوجوانوں کی طاقت اور مالیاتی شعبہ شامل۔آتم نربھر سوچھ پاپ پروگرام 2,200 کروڑ روپے کے ابتدائی اخراجات کے ساتھ شروع کیا جائے گا جس کا مقصد اعلیٰ معیار کی باغبانی فصلوں کیلئے بیماریوں سے پاک اور معیاری پودے لگانے کے مواد کی دستیابی میں اضافہ کرنا ہے۔2014 سے قائم موجودہ 157 میڈیکل کالجوں کے علاوہ اداروں میں 157 نئے نرسنگ کالج کھولے جائیں گے ۔مرکز اگلے تین برسوں میں 3.5 لاکھ قبائلی طلباء کیلئے 740 ایکلویہ ماڈل رہائشی اسکولوں میں 38,800 اساتذہ اور معاون عملہ کی تقرری کرے گا۔پی ایم آواس یوجنا کیلئے اخراجات 66 فیصد بڑھ کر 79,000 کروڑ روپے کئے گئے۔ریلوے کیلئے 2.40 لاکھ کروڑ روپے کے کیپٹل فنڈ کی فراہمی، جو کہ 2013-14 میں فراہم کردہ رقم سے 9 گنا زیادہ اور اب تک کی سب سے زیادہ ہے ۔ترجیحی شعبوں میں قرض کی کمی کے استعمال کے ذریعے اربن انفراسٹرکچر ڈیولپمنٹ فنڈ (یو آئی ڈی ایف) قائم کیا جائے گا۔ اس کا انتظام نیشنل ہاؤسنگ بینک کے ذریعہ کیا جائے گا اور اسے سرکاری ایجنسیاں ٹائر 2 اور ٹائر 3 شہروں میں شہری بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کیلئے استعمال کریں گی۔5Gسروسز پر مبنی ایپلی کیشنز تیار کرنے کیلئے 100 لیب قائم کی جائیں گی، جو نئے مواقع، کاروباری ماڈلز اور روزگار کے امکانات کو تلاش کرنے میں مدد کریں گی۔سرکلر اکانومی کو فروغ دینے کیلئے ، گوبردھن (گیلونائزنگ آرگنک بایو۔ایگرو ریسورسز دھن) نامی اسکیم کے تحت 10,000 ہزار کروڑ روپے کی کل سرمایہ کاری کے ساتھ 500 نئے انکم فروم ویسٹ پلانٹس لگائے جائیں گے ۔ قدرتی اور بائیو گیس کی مارکیٹنگ کرنے والی تمام تنظیموں کیلئے 5 فیصد کا کمپریسڈ بائیو گیس سرپلس بھی لایا جائے گا۔حکومت اگلے تین برسوں میں ایک کروڑ کسانوں کی قدرتی کھیتی کو اپنانے کیلئے حوصلہ افزائی اور مدد کرے گی۔ اس کیلئے 10,000 بائیو ان پٹ ریسورس سینٹرز قائم کیے جائیں گے ، جو قومی سطح پر تقسیم کیے جانے والے مائیکرو فرٹیلائزر اور کیڑے مار ادویات کی تیاری کا نیٹ ورک بنائیں گے ۔ پردھان منتری کوشل وکاس یوجنا 4.0 اگلے تین برسوں میں لاکھوں نوجوانوں کو ہنر مند بنانے کیلئے شروع کی جائے گی اور اس میں صنعت کی نئی نسل 4.0 سے متعلقہ ٹیکنالوجیز جیسے کہ آرٹیفیشیل انٹلی جنس، روبوٹکس، میکاٹرونکس، آئی او ٹی، تھری ڈی پرنٹنگ، ڈرون اور سافٹ سکلز جیسے کورسز شامل کیے جائیں گے ۔ ہنر مند نوجوانوں کو بین الاقوامی مواقع فراہم کرنے کیلئے 30 اسکل انڈیا انٹرنیشنل سینٹرز قائم کیے جائیں گے ۔ ایم ایس ایم ای کیلئے کریڈٹ گارنٹی اسکیم کی تجدید کی گئی ہے ۔ کارپس میں 9,000 کروڑ روپے کا اضافہ کرکے اسے 1 اپریل 2023 سے نافذ کیا جائے گا۔ اس کے علاوہ اس اسکیم کے ذریعے 2 لاکھ کروڑ روپے کا بغیر گارنٹی والا قرض بھی ممکن ہوگا۔ اس کے علاوہ کریڈٹ کی لاگت میں تقریباً 1 فیصد کی کمی آئے گی۔سینئر سٹیزن سیونگ اکاؤنٹ اسکیم میں جمع کرنے کی زیادہ سے زیادہ حد کو 15 لاکھ روپے سے بڑھا کر 30 لاکھ روپے کر دیا گیا ہے ۔مالیاتی خسارہ 2025-26 تک جی ڈی پی کے 4.5 فیصد سے نیچے رہنے کا تخمینہ ہے۔ہندوستان کو ‘شری انا’ کا عالمی مرکز بنانے کے مقصد سے حیدرآباد کے انڈین ملیٹس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کو ایک سنٹر آف ایکسیلنس کے طور پر فروغ دیا جائے گا۔ زرعی قرض کو مویشی پالنے ، ڈیری اور ماہی پروری تک توسیع دیتے ہوئے اسے 20 لاکھ کروڑ روپے قرض دینے کا ہدف۔پی ایم متسیا سمپدا یوجنا کی ایک نئی ذیلی اسکیم 6,000 کروڑ روپے کی ہدفی سرمایہ کاری کے ساتھ شروع کی جائے گی۔ سرکاری خدمات کو بڑھانے کیلئے 500 بلاکس پر محیط خواہش مند بلاکس پروگرام شروع کیا گیا۔درج فہرست قبائل کے ترقیاتی ایکشن پلان کے تحت اگلے 3 برسوں میں پردھان منتری پی وی ٹی جی وکاس مشن کو نافذ کرنے کیلئے 15,000 کروڑ روپے ۔ بندرگاہوں، کوئلہ، اسٹیل، کھاد اور غذائی اجناس کے شعبوں میں 100 اہم ٹرانسپورٹ انفراسٹرکچر پروجیکٹوں میں 75,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری، جس میں نجی شعبے سے 15,000 کروڑ روپے شامل ہیں۔5300کروڑ روپے پائیدار معمولی آبپاشی اور پینے کے پانی کے منصوبے کی فراہمی کیلئے مرکزی امداد کے طور پر دیے جائیں گے ۔عدالتی انتظامیہ میں کارکردگی لانے کیلئے ای کورٹس پروجیکٹ کا مرحلہ III 7000کروڑ روپے کی لاگت سے شروع کیا جائے گا۔توانائی کی منتقلی اور خالص صفر مقاصد اور توانائی کی حفاظت کیلئے ترجیحی سرمایہ کاری کیلئے 35,000 کروڑ روپے کا انتظام کیا گیا ہے ۔لداخ سے قابل تجدید توانائی کے اخراج اور گرڈ انٹیگریشن کیلئے 20,700 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری سے ایک بین ریاستی ٹرانسمیشن سسٹم بنایا جائے گا۔ماہانہ انکم اکاؤنٹ اسکیم کیلئے زیادہ سے زیادہ جمع کرنے کی حد کو سنگل اکاؤنٹ کیلئے 4.5 لاکھ روپے سے بڑھا کر 9 لاکھ روپے اور مشترکہ اکاؤنٹ کیلئے 9 لاکھ روپے سے بڑھا کر 15 لاکھ روپے کر دیا گیا ہے ۔موجودہ مالی سال میں کل غیر قرض لینے والی رسیدوں کا نظرثانی شدہ بجٹ تخمینہ 24.3 لاکھ کروڑ روپے ہے ، جس میں خالص ٹیکس وصولیاں 20.9 لاکھ کروڑ روپے ہیں۔ کل اخراجات کا نظرثانی شدہ تخمینہ 41.9 لاکھ کروڑ روپے ہے ، جس میں سرمایہ خرچ تقریباً 7.3 لاکھ کروڑ روپے ہے ۔ مالیاتی خسارے کا نظرثانی شدہ تخمینہ جی ڈی پی کا 6.4 فیصد ہے ۔عام بجٹ 2023-24میں کل وصولیاں اور کل اخراجات کا تخمینہ بالترتیب 27.2 لاکھ کروڑ روپے اور 45 لاکھ کروڑ روپے لگایا گیا ہے ۔ خالص ٹیکس وصولیوں کا تخمینہ 23.3 لاکھ کروڑ روپے ہے ۔ مالیاتی خسارے کا تخمینہ جی ڈی پی کا 5.9 فیصد ہے ۔ 2023-24 میں مالیاتی خسارے کی مالی اعانت کیلئے سیکیورٹیز سے مارکیٹ کے قرضے کا تخمینہ 11.8 لاکھ کروڑ روپے ہے ۔ مجموعی مارکیٹ میں قرض لینے کا تخمینہ 15.4 لاکھ کروڑ روپے ہے ۔نئے ٹیکس نظام میں ذاتی انکم ٹیکس چھوٹ کی حد 5 لاکھ روپے سے بڑھا کر 7 لاکھ روپے کر دی گئی ہے ۔ پرسنل انکم ٹیکس کے نئے نظام میں سلیب کی تعداد چھ سے کم کر کے پانچ کر دی گئی ہے اور ٹیکس چھوٹ کی حد تین لاکھ روپے کر دی گئی ہے ۔ نئے ٹیکس نظام میں تنخواہ دار شخص کو 50,000 روپے کی معیاری کٹوتی اور فیملی پنشن میں 15,000روپے تک کی کٹوتی کا فائدہ دینے کی تجویز ہے ۔غیر سرکاری تنخواہ دار ملازمین کی ریٹائرمنٹ پر چھٹی کی رقم پر ٹیکس چھوٹ کی حد بڑھا کر 25 لاکھ کر دی گئی ہے۔ نئے ٹیکس نظام کو پہلے سے طے شدہ ٹیکس نظام بنایا جائے گا، حالانکہ شہریوں کے پاس پرانے ٹیکس نظام کے فوائد حاصل کرنے کا اختیار جاری رہے گا۔اگنی پتھ یوجنا 2022 میں رجسٹرڈ اگنی ویر کو اگنیور کارپس فنڈ کے ذریعے کی گئی ادائیگی کو اگنی ویر ندھی کو ای ای ای کا درجہ دینے اور ٹیکس سے مستثنیٰ کرنے کی تجویز۔ اگنی ویروں کی کل آمدنی میں کمی اگنی ویروں کو دینے کی تجویز ۔ٹیکسٹائل اور زراعت کے علاوہ بنیادی کسٹم ڈیوٹی کی شرح 21 سے کم کر کے 13کر دی گئی۔ بعض اشیاء پر بنیادی کسٹم ڈیوٹی، سیس اور سرچارجز میں معمولی تبدیلیاں کی گئی ہیں جن میں کھلونے ، سائیکل، آٹوموبائل اور نافتھا شامل ہیں۔سبز نقل و حرکت کو مزید تقویت دینے کیلئے ، الیکٹرک گاڑیوں میں استعمال ہونے والی بیٹریوں کیلئے لیتھیم آئن سیلز کی تیاری کیلئے درکار کیپٹل گڈز اور مشینری کی درآمد پر کسٹم ڈیوٹی کی چھوٹ دی جا رہی ہے ۔ موبائل فون کی مینوفیکچرنگ میں ڈومیسٹک ویلیو ایڈیشن کو مزید بڑھانے کیلئے ، کچھ ان پٹ جیسے پرزہ جات اور کیمرہ لینز کی درآمد پر بنیادی کسٹم ڈیوٹی ریلیف میں توسیع اور لیتھیم آئن بیٹری سیلز پر مزید ایک سال تک رعایتی ڈیوٹی جاری رکھنے کی تجویز ہے ۔ ٹی وی پینلز کے اوپن سیل حصوں پر بنیادی کسٹم ڈیوٹی کو 2.5فیصد تک کم کرنے کی تجویز۔ الیکٹرک کچن چمنیوں پر بنیادی کسٹم ڈیوٹی 7.5فیصد سے بڑھا کر 15 فیصد کرنے کی تجویز ہے ۔ الیکٹرک کچن چمنیوں کی ہیٹ کوائلز پر درآمدی ڈیوٹی 20 فیصد سے کم کرکے 15 فیصد کرنے کی تجویز۔سگریٹ پر نیشنل کیمٹی کنٹیجینٹ ڈیوٹی (این سی سی ڈی) میں تقریباً 16 فیصد اضافہ کرنے کی تجویز۔

Related posts

کرکٹ کی دنیا کے بہترین فیلڈرز میں سے ایک محمد کیف

www.samajnews.in

کیرالہ میں دو خواتین کا بلی دیکر قتل

www.samajnews.in

نماز دین کا ستون ہے

www.samajnews.in