33.1 C
Delhi
جولائی 25, 2024
Samaj News

عمران خان کی پاکستانی فوج کی مخالفت کےبعد بے دخلی کا سامنا

پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کی آزاد خارجہ پالیسی کے حوالہ سے ہندوستان کی تعریف کرتے ہوئے اس کی وضاحت کرنا دوسری صورت میں مشکل ہے جب جمعہ 25 مارچ 2022 کو انہیں پاکستان کی قومی اسمبلی میں ایک اہم تحریک عدم اعتماد کا سامنا کرنا پڑے گا جہاں ان کی برطرفی تمام نظر آتی ہے۔ عمران خان پابندیوں کے باوجود اور بھارت کے چار فریقی اتحاد کا رکن ہونے کے باوجود روس سے تیل خریدنے کے بھارتی فیصلے کا حوالہ دے رہے تھے۔ انہوں نے 20 مارچ کو خیبر پختونخواہ میں ایک عوامی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا’’ان کی پالیسی لوگوں کی بہتری کے لیے ہے۔‘‘لگتا ہے کہ انہیں ناکام ریاست کی حکومت کی صدارت کرنے کی کوشش کی اپنی حماقت کا احساس ہو گیا ہے۔عمران خان کی اپنی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے پاس 342 رکنی قومی اسمبلی میں صرف 155 نشستیں ہیں، اور ان کے درمیان 23 نشستیں رکھنے والے چھ اتحادی جماعتوں کی حمایت غیر یقینی ہونے کے باعث یہ دیکھنا مشکل ہے کہ پاکستان کے سابق کرکٹ کپتان کیسے بطوروزیر اعظم اپنے آپ کو بچا پاتے ہیں۔ پاکستان مسلم لیگ نواز اور پاکستان پیپلز پارٹی کے 100 کے قریب اراکین اسمبلی نے تحریک عدم اعتماد جمع کرائی ہے۔ عمران خان کو اقتدار سے ہٹانے کے لیے انہیں قومی اسمبلی میں 172 ارکان کی حمایت درکار ہے۔ عمران خان کی اپنی پاکستان تحریک انصاف میں دراڑیں آ گئی ہیں۔ اتحادی پاکستان مسلم لیگ قائد کا ایک اہم ساتھی عمران خان کے بطور وزیر اعظم مخالف ہے۔عمران خان کی ممکنہ معزولی ایک بار پھر ثابت کرے گی کہ پاکستان میں جمہوریت زندہ نہیں رہ سکتی، ایک ایسا ملک جہاں فوج اور اس کا طاقتور ونگ انٹر سروس انٹیلی جنس ہر چیز کو کنٹرول کرتا ہے۔ عمران خان نے فوج کو ناراض کرنے کا بڑا گناہ کیا ہے۔پاکستان میں کسی بھی سیاسی جماعت کو اقتدار برقرار رکھنے کے لیے سیاسی طور پر طاقتور فوج کی حمایت بہت ضروری ہے۔ اس نے اقتدار میں رہنے کے لیے آئی ایس آئی کو استعمال کیا اور اب وہی آئی ایس آئی اسے اقتدار سے ہٹانے کی کوشش کر رہی ہے۔ عمران خان اس راستے میں کھڑے ہو گئے تھے جسے فوج میں معمول کے تبادلے کے طور پر دیکھا جا رہا تھا۔ پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے آئی ایس آئی کے ڈائریکٹر جنرل لیفٹیننٹ جنرل فیض حامد کو پشاور میں قائم الیون کور کے کمانڈر کے طور پر تبدیل کرنے اور ان کی جگہ تبدیل کرنے کا منصوبہ بنایا تھا۔ ان کے ساتھ لیفٹیننٹ جنرل ندیم انجم بطور ڈی جی آئی ایس آئی۔ وزیراعظم نے باضابطہ نوٹیفکیشن جاری کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ حقیقت، ممکنہ طور پر، یہ ہے کہ عمران خان خود لیفٹیننٹ جنرل فیض حامد پر بہت زیادہ انحصار کر چکے تھے اور اپنی سیاسی بقا کے لیے آئی ایس آئی کو استعمال کر رہے تھے۔ بالآخر، عمران خان کو اکتوبر 2021 میں منہ کی کھانی پڑی اور جنرل باجوہ کی طرف سے پیش کیے گئے تین ناموں کے پینل میں سے اسی لیفٹیننٹ جنرل ندیم انجم کو ڈی جی آئی ایس آئی کے طور پر منتخب کرنےپر مجبور ہونا پڑا تھا۔ بتایا جاتا ہے کہ عمران خان کو آرمی چیف کو تبدیل کرنے کی کسی بھی کوشش کے خلاف خبردار کیا گیا تھا۔جہاں اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے عمران خان کی برطرفی کے مطالبے میں تیزی آرہی ہے، وہیں مہنگائی جیسے ملکی مسائل کو اجاگر کیا گیا ہے۔ پاکستان کے سابق کرکٹ کپتان کو بھی پاکستان کے خارجہ تعلقات کو خراب کرنے کے الزام کا ایک حصہ اپنے اوپر بھی لینا چاہئے۔ یہ بھی فوج کے لیے اچھا نہیں ہوا جو ملک کے خارجہ تعلقات میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔ مسئلہ کشمیر کے بارے میں عمران کے اپنے جنون نے عالم اسلام کے ایک طاقتور طبقے کی مخالفت کی ہے۔ اس نے کھلے ہتھیاروں سے چین کو گلے لگایا ہے، اور اس عمل میں امریکہ کی مخالفت کی ہے۔ چین کا مذاق اڑانے کے لیے، اس نے سنکیانگ میں ساتھی مسلمانوں پر ہونے والے ظلم و ستم کی مذمت کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ لیکن اس کے باوجود وہ چینیوں کی مکمل حمایت حاصل کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ پاکستان کے سیاسی طور پر طاقتور آرمی چیف جنرل باجوہ نے فوج کے روایتی ڈومین میں مداخلت کرنے پر عمران خان کے خلاف حملہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔جنرل باجوہ نے اپنے اس لمحے کا انتخاب کیا جب پاکستان 22 اور 23 مارچ کو اسلام آباد میں اسلامی تعاون تنظیم(OIC)کے اجلاس کی میزبانی کر رہا ہے۔ نومبر 2021 میں نائیجر میں ہونے والے او آئی سی کے اجلاس میں، او آئی سی نے کشمیر کو الگ آئٹم کے طور پر زیر بحث لانے سے انکار کر کے عمران خان کی حکومت کو پیغام بھیجا تھا۔ آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد سے عمران خان حکومت او آئی سی کا کشمیر پر خصوصی اجلاس بلانے کا مطالبہ کر رہی ہے لیکن اسے سعودی عرب جیسے ممالک کی طرف سے پذیرائی نہیں ملی۔ عمران خان کے دور حکومت میں، خیال کیا جاتا ہے کہ عرب دنیا کے ساتھ پاکستان کے تعلقات تاریخی کم ترین سطح پر ہیں۔ خاص طور پر جب پاکستان کے وزیر اعظم نے چین کی طرف سے سن شیانگ صوبے کے مسلمانوں کی نسل کشی پر تنقید کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ اس کے بجائے ترک صدر رجب طیب اردوان کو او آئی سی کے رہنما کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں جو مؤخر الذکر نے کشمیر پر دی ہے۔ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں اسے اب بھی ایک سلگتا ہوا مسئلہ قرار دیا۔

Related posts

ہندوستان جمہوریت کی ماں، جمہوریت ہماری رگوں میں ہے: وزیر اعظم مودی

www.samajnews.in

سابق تجربہ کار کا چیئرمین پی سی بی کو جواب، روہت اور ویرات کو پاکستان لیگ میں بھیج دیا، پھر بھی پیسے نہیں اٹھا سکیں گے

www.samajnews.in

شہزادی ڈائنا کی طلاق کی وجہ کیا تھی…بیٹی پیدا نہ کرنے کی وجہ سے میں چارلس کے دل سے اتر گئی تھی: شہزادی ڈائنا

www.samajnews.in