41.1 C
Delhi
مئی 29, 2024
Samaj News

بوسٹر ڈوز لگوا چکے افراد نہیں لے سکتے ’نیزل ویکسین‘

نئی دہلی: ہندوستان میں ‘بھارت بائیوٹیک کی ناک کی (نیزل) ویکسین کو پچھلے ہفتے ہی منظور کیا گیا تھا۔ اس کے ساتھ ہی منگل کو کمپنی نے اس کی قیمت کے بارے میں بھی جانکاری دی۔ اب ایک اہم بات سامنے آئی ہے کہ ناک کی ویکسین ان لوگوں کو نہیں لگائی جائے گی جنہوں نے احتیاطی یا بوسٹر ڈوز لے لی ہے۔ یہ معلومات ملک کی ویکسین ٹاسک فورس کے سربراہ نے دی ہے۔ویکسین ٹاسک فورس کے سربراہ ڈاکٹر این کے اروڑہ نے این ڈی ٹی وی کو بتایا، ’’اس (نیزل ویکسین) کو پہلے بوسٹر کے طور پر لگایا جانا ہے۔ مثال کے طور پر اگر کسی شخص کو پہلے ہی احتیاطی خوراک مل چکی ہے تو یہ اس شخص کے لیے نہیں ہے۔ یہ ان لوگوں کے لیے ہے جنہوں نے ابھی تک احتیاطی خوراک نہیں لی ہے۔‘‘ڈاکٹر اروڑہ این ٹی اے جی آئی کے کوویڈ ورکنگ گروپ کے چیئرمین ہیں، جو حفاظتی ٹیکوں پر قومی تکنیکی مشاورتی گروپ کے لیے مختصر ہے۔ یہ تنظیم نئی ویکسین متعارف کرانے اور یونیورسل امیونائزیشن پروگرام کو مضبوط بنانے پر کام کرتی ہے۔ڈاکٹر اروڑہ نے بتایا کہ ویکسین پروگرام کے حصے کے طور پر ’کووِن‘ کا نظام چوتھی خوراک کو قبول نہیں کرے گا۔ انہوں نے مزید کہا ’’فرض کریں کہ آپ ایک اور چوتھی خوراک لینا چاہتے ہیں تو اسے ’اینٹی جن سنک‘ کہا جائے گا۔ اگر کسی شخص کو بار بار کسی خاص قسم کے ینٹی جن سے امیونٹی دی جاتی ہے تو جسم رد عمل دینا بند کر دیتا ہے یا خراب رد عمل ظاہر کرتا ہے۔‘‘ڈاکٹر اروڑہ نے کہا ’’انٹری پوائنٹ (ویکسین کا) سانس کی نالی ہے – ناک اور منہ جہاں مدافعتی نظام میں رکاوٹیں پیدا ہوتی ہیں، تاکہ وائرس کو اتنی آسانی سے نظام میں داخل ہونے کی اجازت نہ ہو۔ یہ صرف کورونا کے معاملہ میں ہی نہیں بلکہ سانس سے پھیلنے والے وائرس اور انفیکشن کے معاملہ میں بھی کارآمد ثابت ہوتا ہے۔”18 سال سے زیادہ عمر کا کوئی بھی شخص ناک کی ویکسین لے سکتا ہے۔ انہوں نے کہا ’’یہ بہت آسان ہے۔ ناک کے دونوں چھیدوں میں چار قطرے، کل 0.5ملی لٹر ڈالنا ہے اور زیادہ تر معاملوں میں کوئی منفی اثرات بھی نظر نہیں آتے۔ یہ انتہائی محفوظ ویکسین ہے۔‘‘ ان کا کہنا تھا کہ ’’اس ویکسین کے لیے بھی دیگر ویکسین کی طرح ہمیں 15 سے 30 منٹ تک انتظار کرنا ہوگا، اگر کوئی رد عمل ظاہر ہوتا ہے تو اسے فوری طور پر ٹھیک کیا جا سکتا ہے، تاہم اعداد و شمار میں اس طرح کا کوئی واقعہ رپورٹ نہیں ہوا۔‘‘جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا لوگوں کو ناک کی ویکسین کے بعد بوسٹر ڈوز لینے کی ضرورت ہوگی تو ڈاکٹر اروڑہ نے کہا ’’اس وقت سائنسی جواب یہ ہے کہ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ مزید ویکسین کی ضرورت ہوگی۔ یہاں تک کہ ان ممالک میں بھی جہاں لوگوں نے تین ویکسین لگائی ہیں، وہاں بھی لوگ انفیکشن میں مبتلا ہیں‘‘۔

Related posts

دہلی ایم سی ڈی انتخابات کیلئے کاغذات نامزدگی شروع

www.samajnews.in

’ایشیا کپ کی چمپئن ’ٹیم انڈیا

www.samajnews.in

مدارس میں پہلی سے 8ویں کلاس تک کےطلباء کو نہیں ملےگی اسکالرشپ، مرکزی حکومت کی ہدایت

www.samajnews.in